فرانس میں گھوڑوں کے کان اور ناک کاٹے جانے کا معمہ، وزیر زراعت نے بھی تشویش ظاہر کردی

پیرس (کشمیر لنک نیوز) فرانس میں گھوڑوں کے کان اور ناک کاٹے جانے کا معمہ کئی ماہ بعد بھی حل نہ ہوسکا، پولیس کا بھی اظہار تشویش جبکہ ملک بھر کی چراہ گاہوں اور اصطبلوں میں سیکیورٹی کے خصوصی انتظامات کئے جارہے ہیں۔
چند ماہ میں فرانس کی چرا گاہوں میں گھوڑوں کے ناک اور کان کاٹنے کے اب تک 30 واقعات رونما ہو چکے ہیں۔ پولیس کے مطابق ملک بھر سے ایسے واقعات رپورٹ ہوئے ہیں جن میں گھوڑوں کی ناک اور عموماً دایاں کان چاقو سے کاٹا گیا ہے۔

برطانوی اخبار گارڈین کے مطابق فرانس کے وزیر برائے زراعت کا کہنا ہے کہ فروری میں ایک گھوڑے پر حملے کا پہلا واقعہ سامنے آیا تھا جس کے بعد سے ملک بھر میں اب تک ایسی 30 وارداتیں ہو چکی ہیں۔
ہر نئے حملے کی خبر کے ساتھ فرانس میں حملہ آوروں اور ان کے عزائم کے بارے میں تجسس بڑھ رہا ہے۔
فرانسیسی وزیر زراعت جولین ڈینورمینڈی کے مطابق حملوں کے حوالے سے تحقیقات میں ہر قسم کی ممکنات کا جائزہ لیا جا رہا ہے۔

فرانس کے شہری نکولس کی جانب سے دی گئی معلومات کی بنیاد پر پولیس نے حملہ آوروں کا خاکہ شائع کیا تھا۔
چند دن قبل دو حملہ آوروں نے نکولس کے گھوڑوں کو نشانہ بنایا تھا جس کے بعد سے وہ اپنے گھوڑوں کو چرا گاہوں میں چھوڑتے ہوئے خوف محسوس کرتے ہیں۔

50% LikesVS
50% Dislikes