کولون کا بدنام زمانہ قحبہ خانہ کورونا کی وجہ سے دیوالیہ ہوگیا

کولون (کشمیر لنک رپورٹ)جرمنی کے شہر کولون میں واقع مشہور جسم فروشی کا بڑا مرکز ’پاشا‘ ماضی کا حصہ بننے جا رہا ہے جس کو چلانے والی کمپنی نے عدالت میں دیوالیے کی درخواست جمع کرا دی ہے۔ پاشا نامی براتھل ہاؤس کا شمار یورپ کے انتہائی بڑے قحبہ خانوں میں کیا جاتا ہے ۔ جرمن شہر کولون میں یہ ایک بڑی کثیر المنزلہ عمارت میں شائقین کی لذتوں کو پورا کرنے کا سلسلہ جاری رکھے ہوئے تھا۔ اس کو کورونا وائرس نے شدید متاثر کیا اور کئی ماہ سے کاروباری سرگرمیاں نہ ہونے کے برابر تھیں۔
ماہرین کا کہنا ہے کہ وبا کی وجہ سے عائد پابندیوں نے جسم فروشی کی سرگرمیوں کو محدود کر رکھا ہے اور اس باعث کئی ایسے مراکز کو اب دیوالیہ پن کا سامنا ہے۔ دوسری جانب جرمنی کو دوسری عالمی جنگ کے بعد سب سے شدید کساد بازاری کا سامنا ہے اور کئی کمپنیوں کے دیوالیے کا امکان ظاہر کیا جا رہا ہے۔ پاشا براتھل ہاؤس کی انتظامیہ کی جانب سے دیوالیہ کی درخواست جمع کرانے کی خبر ایک مقامی روزنامے نے شائع کی ہے۔ اخبار سے بات کرتے ہوئے قحبہ خانے کے ڈائریکٹر ارمین لوبشائیڈ کا افسوس سے کہنا تھا، ہم ختم ہو کر رہ گئے ہیں ۔ لوبشائیڈ نے مزید بتایا کہ وبائی ایام میں کاروبار کو سنبھالنے میں تمام بچا ہوا سرمایہ بھی اچھے وقت کے انتظار میں صرف کر دیا گیا اور اب کچھ باقی نہیں رہا۔
یہ امر اہم ہے کہ کورونا وبا کے شدید ایام کے دوران برلن حکومت نے کئی دوسری پابندیوں کے ساتھ منظم جسم فروشی کی ممانعت کر دی تھی۔ کولون کا شہر جرمن گنجان آباد صوبے نارتھ رائین ویسٹ فالیا میں ہے اور یہاں کی صوبائی حکومت نے جسم فروشی کے کاروبار پر پانچ ماہ قبل سے حفاظتی تدابیر کے تناظر میں پابندی عائد کر رکھی ہے۔ پاشا کے ڈائریکٹر لوبشائیڈ نے اس پابندی پر بھی کڑی تنقید کی ہے۔ ان کا کہنا ہے حکومت نے واضح نہیں کیا کہ یہ پابندی کب تک جاری رہے گی اور اس انداز میں کوئی پلاننگ نہیں کی جا سکتی۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ اب تک بینکوں کی مدد سے دیوالیہ پن سے بچنے کو کوششیں جاری رکھی گئی لیکن اب مزید ایسا ممکن نہیں۔
ایک اخبار کے مطابق لوبشائیڈ کا کہنا ہے کہ حکومتی یقین دہانی سے اگلے برس کاروبار دوبارہ شروع کیا جا سکتا ہے۔ ان کا یہ بھی کہنا ہے کہ سبھی جانتے ہیں کہ پابندی کے باوجود رقم ادا کرنے کے عوض جسم فروشی کا کاروبار اب بھی خفیہ انداز میں جاری و ساری ہے اور ایسے کاروبار سے حکومت کو ٹیکس کی ادائیگی بھی نہیں ہو رہی۔
براعظم یورپ میں پاشا براتھل ہاؤس کا وسیع کاروباری نیٹ ورک ہے۔ کولون شہر میں اس کی بلند عمارت گیارہ منزلوں پر محیط ہے اور اس میں انتظامیہ کے ساٹھ افراد تقریباً ہر وقت موجود ہوا کرتے تھے۔ ایک وقت میں تقریباً ایک سو بیس طوائفیں جزوقتی طور پر گاہکوں کو لبھانے کے ساتھ ساتھ جسم فروشی کے لیے موجود ہوا کرتی تھیں۔

50% LikesVS
50% Dislikes