ماں بیٹی کی پراسرار موت، پوسٹ مارٹم کے بعد شواہد سامنے آسکیں گے؛ لنکا شائیر پولیس

برنلے (محمد فیاض بشیر) لنکاشائر پولیس نے برنلے کے نواح میں ایک گھر میں مردہ پائی جانے والی ماں بیٹی کے قتل کی باقاعدہ تفتیش کا آغاز کردیا ہے۔
تفصیلات کے مطابق ری ڈلے نیلسن میں رہائش پذیر پاکستانی نژاد 49 سالہ ڈاکٹر ثمن میر سچاروی اور انکی چودہ سالہ بیٹی ویان منگریو اپنے گھر پر مردہ حالت میں پائی گئیں ۔ پولیس کو انکی حفاظت بارے تشویش سے آگاہ کیا گیا تھا، لنکا شائر پولیس کے آفیسرز جب گھر کے اندر داخل ہوئے تو انہیں ماں بیٹی مردہ حالت میں ملیں اور وہاں آگ اور دھوئیں کے شواہد بھی پائے گئے۔

پولیس ذرائع کا کہنا ہے کہ اصل حقیقت پوسٹ مارٹم کے بعد ہی سامنے آئے گی لنکاشائر پولیس نے اس بات کی تصدیق بھی کر دی ہے کہ ماں بیٹی کی موت بارے کچھ کہنا قبل از وقت ہے لیکن قتل کی تحقیقات شروع کر دی گئی ہیں اور تمام پہلوؤں کا بخور جائزہ لیا جارہا ہے۔

لنکاشائر پولیس کا مذید کہنا تھا کہ مرنے والوں کے ورثا کو مطلع کر دیا گیا ہے اور ہمارے ماہرین کی خاص ٹیم مشکل وقت میں انکی ہر ممکن مدد کر رہی ہے لنکاشائر جرائم تحقیقاتی کانسٹبلری کے سربراہ سپرینٹنڈنٹ جان ہولمز کا کہنا تھا کہ یہ ایک دلخراش واقعہ ہے میری تمام تر ہمدردیاں اہل خانہ کے ساتھ ہیں ان کا مذید کہنا تھا کہ اس وقت تحقیقات ابتدائی مراحل میں کچھ کہنا قبل از وقت ہے ۔ دوسری جانب ویان منگریو کے دوست اور کلاس فیلوز اسکی اچانک موت پر انتہائی رنجیندہ ہیں اور سوشل میڈیا پر سوگوار خاندان سے ہمدردی کا اظہار کررہے ہیں۔ مقتولہ کی اسکے والد ڈاکٹر شوکت منگریو سے ایک تصویر شیئر کرتے ہوئے فیملی فرینڈ کا کہنا تھا کہ وہ ڈاکٹر منگریو کی اکلوتی اولاد تھی جس سے انہیں بہت پیار تھا

تحقیقاتی ماہرین پر مشتمل ہماری ٹیم اس معاملے کی تحقیقات کر رہی ہے اور تمام شواہد اکٹھے کیے جا رہے ہیں ابتدائی مراحل میں ڈاکٹر سچاروی اور مس منگریو کی موت بارے کچھ حتمی نہیں کہا جا سکتا۔ اس موقع پر انہوں نے ارد گرد رہائش پذیر کمیونٹی سے اپیل کی کہ اگر انہوں نے کوئ بھی مشکوک حرکت دیکھی ہو تو پولیس سے رابطہ کر کے معلومات فراہم کریں تاکہ اس کیس کی گہرائی تک پہنچا جا سکے ان کا کہنا تھا کہ اس دلخراش واقعہ سے مقامی کمیونٹی پر جو برا اثر پڑا ہے ہمیں اسکا بخوبی اندازہ ہے لیکن کمیونٹی سے اپیل ہے کہ اگر انہوں نے کوئ بھی مشکوک حرکت دیکھی ہو تو براہ راست پولیس کو اطلاع دیں ہو سکتا ہے ایسا کرنے سے ہم موت کے اصل محرکات تک جلد از جلد پہنچ جائیں۔

50% LikesVS
50% Dislikes