یورپ بھر میں کورونا کی دوسری لہر قہر ڈھانے لگی، بغیر ماسک جرمانے اور جزوی کرفیو کا نفاذ

پیرس (کشمیر لنک نیوز) یورپ کا وہ خطہ جہاں سے کورونا وبا نے زور پکڑا تھا دوسری لہر میں پھر سے خوفناک حد تک نتائج دینے لگا ہے۔ فرانسیسی صدر ایمانوائیل میخواں کا کہنا ہے کہ دارالحکومت پیرس سمیت نو9 بڑے شہروں میں کرفیو نافذ کردیا گیا ہے۔

تازہ ترین اعداد و شمار کے مطابق فرانس میں گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران ریکارڈ 30،621 نئے کرونا کیسز رجسٹرڈ ہوئے، جبکہ 24 گھنٹوں کے دوران 88 افراد کرونا سے ہلاک ہوچکے ہیں۔
ملک بھر میں مجموعی کرونا کیسسز کی تعداد 672,477 تک پہنچ گئی ہے جسکی وجہ سے کرفیو کیساتھ ساتھ بغیر ماسک جرمانے عائد کرنے کا سلسلہ تیزی سے جاری ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق فرانسیسی صدر نے کہا ہے کہ کرفیو کی خلاف ورزی کرنے والے پر 125 یورو جرمانہ عائد کیا جائے گا۔ قومی ٹی وی پر ایک انٹرویو کے دوران فرانسیسی صدر کا کہنا تھا کہ کرفیو کے نفاذ کے بعد لوگ رات گئے ریسٹورنٹس یا دوستوں کے گھروں کو نہ جائیں۔

انہوں نے کہا کہ پبلک ٹرانسپورٹ پر کوئی پابندی نہیں ہو گی اور لوگ بدستور فرانس کے مختلف علاقوں میں کسی رکاوٹ کے بغیر سفر کر سکیں گے۔ صدر میخواں نے کہا کہ ہمیں ضروری اقدامات کرنے ہیں، ہمیں کورونا وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے اس کے راستے میں رکاوٹ کھڑی کرنے کی ضرورت ہے۔
تازہ ترین اعداد و شمار کے مطابق کے مطابق سپین میں کورونا وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے ملک کے شمال مشرقی ریجن کیٹلونیا میں آئندہ 15 روز کے لیے بارز اور ریسٹورنٹس کو بند کر دیا گیا ہے۔سپین بھی کورونا سے بری طرح متاثر ہونے والے یورپی ممالک میں شامل ہے جہاں 9 لاکھ سے زائد متاثرہ افراد ہیں جبکہ 33 ہزار سے زائد ہلاکتیں ہو چکی ہیں۔

50% LikesVS
50% Dislikes