آزاد کشمیر کے الیکشن اور مسائل – Kashmir Link London

آزاد کشمیر کے الیکشن اور مسائل

انتخابی مہم اپنے زوروں پر ہے اور ہمارے قومی لیڈروں کے جلسوں میں آپ نے کشمیر کے حوالے سے نعرے اور دعوئے ان کی انتخابی تقریروں میں سنے ہوں گئے ان بونگیوں نما تقریروں پر ہمارے میڈیا کے اداریے لکھے جارہے ہیں اور ٹی وی ٹاک شوز کے پروگرام بھی ہو رہے ہیں گزشتہ جمعہ کو اینکر پرسن عینی خان نے روز نیوز کے تجزیاتی پروگرام اوپینین میکرز میں ایک سوال پوچھا کہ بلاول بھٹو اور مریم نواز نے آزادکشمیر کے انتخابی جلسوں میں کشمیر کی بیٹی اور بیٹا ہونے کا دعویٰ کیا ہے پھر جو زبان اور لب و لہجہ جلسوں میں اختیار کیا جارہا ہے کیا یہ آزاد کشمیر کا محدود اور حساس سا خطہ اس کا متحمل ہوسکتا ہے دوسرا یہ کہ کیا پاکستان کی بڑی جماعتوں کے ان رہنماؤں کو آزاد کشمیر کے مسائل کا بھی پتہ ہے یا نہیں میرے ساتھ دوسرے تجزیہ نگاروں میں روز نیوز کے چیئرمین سردار خان نیازی جنرل امجد شعیب، احمد رضا قصوری، جنرل نعیم لودھی، برگیڈئیر ریٹائرڈ حامد نواز بھی شامل ہوتے ہیں میں نے مختصر وقت میں آزاد کشمیر کے چند موٹے موٹے مسائل کو پیش کیا چونکہ وقت مختصر ہوتا ہے اس لئے میں ان مسائل کو کالموں کے زریعے پیش کر رہا ہوں اس سے آپ بخوبی اندازہ لگا سکتے ہیں کہ کیا ان مسائل کے بارے میں ہمارے لیڈروں نے اپنے جلسوں میں کسی جگہہ زکر یا فوکس کیا ہے یا نہیں یہ سند کے طور پر لکھ رہا ہوں کہ میں نے1984 میں گریجویشن یونیورسٹی اف مظفرآباد سے کی تھی مجھے آج بھی گورنمنٹ پرائمری سکول میں پانچویں جماعت تک وہ پتھر یاد ہے جس پر میں بیٹھا کرتا ہے مڈل سکول میں ٹاٹ یعنی کارپٹ دستیاب ہوئے پھر کالج یونیورسٹی میں لکڑی کے بینچ تھے پرائیویٹ سیکٹر کے سکول بہت بعد کی بات ہے مجھے اس پر فخر ہے کہ کم از کم مجھے تعلیم حاصل کرنے کا موقع تو ملا جبکہ میرے بھائی وسائل نہ ہونے کی وجہ سے سعودی عرب اور دوبئی چھوٹی عمر میں ہی چلے گئے تھے جبکہ ایسے ہی ہزاروں کشمیری نوجوانوں سے سعودی عرب اور مڈل ایسٹ بھرا پڑا ہے جو بے چارے انتہائی نامساعد حالات میں محنت مزدوری کرتے ہیں اور اپنا اور اپنے بچوں اور عزیز و واقارب کا پیٹ پالتے ہیں آج بھی آزاد کشمیر میں محرومیاں ویسی ہی ہیں سونے کے چمچے اور سونے کی چوسنیاں منہ میں لے کر پیدا ہونے والے بلاول اور مریم نواز کو ان کشمیر کے پہاڑوں میں رہنے والوں کے مسائل کا نہ پتہ ہے نہ بلوچستان گلگت بلتستان اور ملک کے دیگر دیہاتی علاقوں کے عوام سے ان کا کوئی رابطہ اور سروکار ہے ہر پانچ سال کے بعد آزاد کشمیر میں الیکشن کا ایک ڈرامہ رچایا جاتا ہے اور آازدکشمیر کے مقامی لیڈر اپنی وفاداریاں بدل کر جس کی بھی وفاق میں حکومت ہوتی ہے اس کو جوائن کرلیتے ہیں۔
آزاد کشمیر میں بے روزگاری بہت زیادہ ہے چونکہ آزاد کشمیر میں تعلیم کی شرح 85% ہے
یہاں پانچ یونیورسٹیاں ہیں انکے پھر سب کیمپس بھی ہیں تین میڈیکل کالجز ہیں
جہاں سے کئی سو ڈاکٹرز اور انجنرز سالانہ بنیادوں پر فارغ التحصیل ہو رہے ہیں جبکہ آزاد کشمیر کے طالبعلم پاکستان کی یونیورسٹیوں سے بھی تعلیم مکمل کر کے فارغ ہو رہے ہیں جبکہ چین اور وسطیٰ ایشیائی ممالک سے بھی پڑھ کر نوجوان واپس آرہے ہیں اب محکمانہ طور پر آزاد کشمیر میں گورنمنٹ سیکٹر میں ان نوجوانوں کے لئے جابس نہیں ہیں حتٰی کہ ڈاکٹرز اور انجنرز فارغ بیھٹے ہوئے ہیں
آزاد کشمیر میں کوئی انڈسٹری سرے سے ہے ہی نہیں کارپوریٹ سیکٹر بھی نہیں ہے
ٹورازم پر تھوڑی توجہ دی گئی تھی لیکن جو پرکشش سیاحتی مقام ہیں وہ لائن آف کنٹرول کے بالکل قریب ہیں جہاں زیادہ آمد و رفت ممکن نہیں ہے
ہسپتالوں کی عمارتیں موجود ہیں لیکن ڈاکٹرز اور دوائیاں نہیں دیہاتی اور پہاڑی علاقے ہیں
کوئی ائیرایمبولنس نہیں ہے حتیٰ کہ لائن آف کنٹرول پر بھارتی فائرنگ سے آئے روز جو لوگ زخمی ہوتے ہیں وہ بھی فوری طبعی سہولیات سے محروم ہیں
دو چھوٹے ائیرپورٹ بنے تھے ایک راولاکوٹ میں دوسرا مظفر آباد میں لیکن یہ دونوں نامعلوم وجوہات کی بنیاد پر اپرشنل نہیں ہیں
راولاکوٹ میں تولی پیر کا پانچ سو کنال کا علاقہ ہے لیکن یہاں سیاحوں کے لئے کوئی ہوٹل نہیں ہے یہاں آزاد کشمیر کے سابق صدر اور وزیراعظم سردار یعقوب رہتے ہیں جو سرمائے کے زور پر الیکشن میں کامیابی حاصل کرتے ہیں حتٰی کہ فریال تالپور اور آصف علی زرداری نے انہیں وزیراعظم اور صدر ریاست بھی تعینات کیا لیکن وہ راولاکوٹ کے ٹورازم کے فروغ کے لئے کوئی ہوٹل قائم نہیں کرسکے
اگر ہم انفراسٹرکچر کی بات کریں تو ساری سڑکیں ٹوٹی پھوٹی ہیں پاکستان کو ملانے والی سڑکیں کسی حد تک ٹھیک ہیں لیکن سنگل ٹریک ہیں جہاں حادثات ہوتے ہیں اور گاڑیاں دریا میں جا کر گر جاتی ہیں حتٰی کہ آزاد کشمیر قانون ساز اسمبلی کے رکن سردار صغیر چغتائی کی بھی لاش حالیہ دنوں میں منگلہ ڈیم سے ملی ہے
جن کی گاڑی دریا میں گر گئی تھی
ایک سڑک سی پیک کے تحت بننی تھی اس کو اس طرح ڈائزان کیا گیا تھا کہ آزادکشمیر کے تمام اضلاع کو کور کیا جانا تھا جس کو
MMM ایکسپریس وے کا نام دیا گیا تھا یہ
مانسہرہ سے شروع ہوکر براستہ مظفرآباد باغ پونچھ کوٹلی میرپور بھمبر سے پھر گجرات جاکر اس کو ملنا تھا اس منصوبے کے لئے اب بجٹ میں رقم مختص نہیں کی گئی نجانے اس میں کیا رکاٹیں ہیں
میرپور میں سپیشل اکنامک زون بننا تھا یہ بھی سی پیک منصوبے کے تحت تھا اس کی زمین الاٹ تو ہوگی تھی لیکن ڈویلپمنٹ کا کام شروع نہیں ہوسکا
کوہالہ ہائیڈرل پراجیکٹ پر کام شروع ہونا تھا جو منگلہ ڈیم سے بھی بڑا منصوبہ تھا لیکن اس پر کام شروع نہیں ہوسکا
میرپور منگلا ڈیم اپ ریزنگ منصوبہ کے تحت میرپور میں ایک ایئرپورٹ کا وعدہ کیا گیا تھا پھر آزاد کشمیر جانے والی اس اسمبلی نے ایک قرارداد منظور کی تھی کہ میرپور میں ایک ائیرپورٹ بنایا جائے گا یہ دیرینہ مطالبہ یوکے یورپ مڈل ایسٹ میں مقیم نہ صرف کشمیریوں کا ہے بلکہ پوٹھوہار جہلم گجرات اور کھاریاں لالہ موسیٰ کے لوگوں کا بھی ہے لیکن اس پر کوئی پیش رفت نہیں ہوئی ہے آزاد کشمیر میں پچھلے تیس سالوں سے بلدیاتی انتخابات نہیں ہوئے ہیں مسلم لیگ ن نے 2016 میں الیکشن سے پہلے وعدہ کیا تھا کہ وہ برسراقتدار آکر 90 دن کے اندر بلدیاتی انتخابات کروائیں گے لیکن فنڈز کھانے کی خاطر بلدیاتی انتخابات نہیں کروائے گئے اب پی ٹی آئی آزاد کشمیر کے سیکرٹری اطلاعات سردار ارشاد محمود نے میرے ساتھ ایک انٹرویو میں انکشاف کیا کہ پی ٹی آئی کے منشور کے مطابق آزاد کشمیر میں برسراقتدار آکر پی ٹی آئی 90 دن کے اندر بلدیاتی انتخابات کروائے گئی لیکن یہ بھی محض انتخابی نعرہ ثابت ہوگا ابھی پی ٹی آئی نے اس طرح الیکشن مہم شروع نہیں کی ہے جو لیڈر یا وفاقی وزیر آزاد کشمیر کی الیکشن مہم کی یاترا پر آئیں گئے وہ بھی بلاول بھٹو اور مریم نواز کو جوابات دیں گے ان کے پاس بھی کوئی اور ٹرینگ نہیں ہو گی نہ مسائل کا ادارک ہوگا
(جاری ہے )

50% LikesVS
50% Dislikes