یا اللہ ان مسخروں سے میری قوم کو بچا – Kashmir Link London

یا اللہ ان مسخروں سے میری قوم کو بچا

پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کی تحریک میں شامل جماعتوں کا اتحاد ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہے اس کی بنیادی وجہ سابق وزیراعظم میاں محمد نوازشریف کا 20 ستمبر کا فوج مخالف بیانیہ ہے جس کو کوئی اٹھانے کے لئے تیار نہیں ہے دوسری وجہ یہ اتحاد ایک غیر فطری ہے اور اس میں اپنی اور ابو کرپشن پچانے اور قومی خزانوں کی لوٹ مار کر کے اپنی اپنی جائیدادیں بچانے کا اتحاد ہے
یہ دس گیارہ جماعتوں کا اتحاد ایک دوسرے کو بچانے یا زیادہ دیر ساتھ چلنے کا اتحاد نہیں ہے یہ ایک دوسرے سے متضاد جماعتوں کا اتحاد ہے جو فقط عمران خان سے مخالفت ،مخاصمت اور احتساب کے ڈر اور خوف کی وجہ سے قائم ہوا ہے اس اتحاد کے قائم ہونے سے قبل پیپلز پارٹی اور ن لیگ والے ایک دوسرے کے دشمن بنے ہوئے تھے ان کا مسخره پن دیکھیں

آج پاکستان میں دو ہی مضبوط ادارے فوج اور عدلیہ رہ گئے ہیں اور ان کو نشانے پر رکھا ہوا ہے
پی ڈی ایم کے لئے عمران خان کی حکومت کو پریشر میں لانا ناممکن ہے اور نہ ہی پی ڈی ایم پاکستان کی نہایت مضبوط اور مستحکم اسٹیبلشمنٹ کو پریشر میں لانے میں کامیاب ہو سکتی ہے
ہاں البتہ جس معاشرے میں ضمیر مردہ ہو جائیں اور مذہب کو آمدنی کا زریعہ بنا لیا جائے
وہاں عذاب کے لیے مولانا فضل الرحمان جیسے ادھار پر ملنے والے رہنما نمودار وارد اور نازل ہوتے رہتے ہیں اور بات یہاں ہی ختم نہیں ہوتی بلاول جس نے مسٹر ٹین پرسینٹ ، پچاس پرسینٹ اور سو پرسینٹ کی کمائی سے پرورش پائی ہوئی ہے جس کا کمال صرف اور صرف یہ ہے کہ وہ پاکستانی تاریخ کے کرپٹ ترین باپ کی اولاد ہے اور آکسفورڈ سے تعلیم حاصل کی ہے کو ایک عظیم پارٹی جس میں جناب اعتزاز احسن، امین فہیم، رضا ربانی قمر زمان کائرہ ،تاج حیدر جہانگیر بدر جیسے درجنوں پارٹی کے عظیم رہنماؤں کے ہوتے ہوئے پارٹی کا چیرمین بنا دیا جائے جنہوں نےاپنی پوری زندگیاں اس پارٹی کے لئے وقف کردی ہیں ان پر حرام کی کمائی سے پلے بڑھے بچے کو ایک پرچی کے زریعے مسلط کر دیا گیا ہے اور جمہوریت کے نام پر جمہوریت کو دفن کر دیا گیا ہو یہ وہ بچہ ہے جسکو نہ تو اردو آتی ہے نہ سندھی آتی ہے نہ ہی یہ کسی چیز میں مہارت رکھتا ہے ایک ہی مہارت رکھتا ہے اور وہ ہے کرپشن
کرپشن کے پیسے کے زور پر پہلے پیپلز پارٹی فتح کی پھر سندھ فتح کیا سندھ کو فتح کر کے روشنیوں والے شہر کو کچرے کا ڈھیر بنا دیا تھر کے صحرا جہاں اربوں کے بیرون ملک سے فنڈز ملے ابھی بھی پتھر کے زمانے کا حال پیش کر رہا ہے

وہ اسی کرپشن کے مال کے زور پر اب پورے پاکستان کا وزیراعظم بننے کے لئے پر تول رہا ہے اوپر سے سندھ کے وزیراعلیٰ نعرے لگواتا وزیراعظم بلاول یار کسی بھی مہذہب معاشرے میں یہ باپ بیٹا ہوتے تو میڈیا اور عوام کے خوف سے باہر نہ نکلتے لیکن
اللہ تعالی نے ہمیں اپنے اعمال کی سزا کے طور پر ایسے لیڈر ہم پر مسلط کر دیئے ہیں
اللہ کا عذاب یہاں ہی ختم نہیں ہوتا

دوسری طرف نیلسن مینڈیلا جو پنجاب کے محمد شریف کے گھر پیدا ہوا جب اس نے بے اے کر لیا اس کو جنرل جیلانی کی نرسری میں بیھج دیا گیا جنرل جیلانی نے دیکھا بچہ تابعدار ہے تو اسنے جنرل ضیاالحق کی نرسری میں بیھج دیا کرتے کرتے یہ تابع دار بچہ پہلے پنجاب کا وزیر بنا پھر وزیراعلی بنا پھر تین بار اسلامی جمہوریہ پاکستان کا وزیراعظم بن گیا پچھلے پینتیس سالوں سے یہ بچہ اور اسکا بھائی کسی نہ کسی طرح حکومت یا اپوزیشن میں رہے ان بھائیوں نے اتنی کرپشن کی کے رہے نام اللہ کا رہتی دنیا تک اللہ ماشاء اللہ –
اب اس حرام کی کمائی پر اتنا ناز کرنے لگے اور سوچا اب وہ پیسے کے اس زور پر ہر کسی کو خرید سکتے ہیں اور ملک قیوم جیسے ججوں کو خریدتے بھی رہے جس کی ویڈیوز دنیا نے دیکھی
یہ بچہ جو ضیا۶الحق کے گملے میں پروان چڑھا تھا اسکو حرام کی کمائی کا اتنا نشہ ہوگیا کے اب وہ جمہوریت کی باتیں کرنے لگا اور اور خود کو نیلسن مینڈیلا کہنا شروع ہوگیا

جب ملک کی عدلیہ نے مال و دولت کا حساب مانگا تو اسکے پاس ایک جاہلی قطری خط کے سوا کچھ نہ ملا لہذا اسکو سزا ہو گئی اور اس نے مجھے کیوں نکالا کے نام پر ایک تحریک کا آغاز کیا جیل میں جا کر بیماری کا بہانہ بنا کر ملک سے فرار ہوگیا
اب لندن میں بیٹھ کر وطن عزیز کے اداروں کے خلاف باتیں کر رہا ہے اسلامی جمہوریہ پاکستان کے دشمنوں کو خوش کر رہا ہے

حرام کی کمائی ہوئی دولت سے پروان چڑھنے والی اسکی بیٹی جس کو سیاست کی الف ب کا بھی علم نہیں اب وہ بھی کرپشن سے کمائی ہوئی دولت کے بل بوتے پر ن لیگ میں بڑے بڑے پائے کے بزرگ لیڈروں کے سروں پر سوار ہے اور اپنی مرضی کے فیصلے ان پر تھوپ رہی ہے وہ اپنے اپ کو بے نظیر بھٹو سمجھتی ہے اور محترمہ شہید بی بی کی کاپی کرنے کی کوشش کرتی ہے اسکو علم نہیں بے نظیر بننے کے لیے ذوالفقار علی بھٹو کی تربیت کے ساتھ حلال کی کمائی کا بھی اثر تھا
کسی بھی معاشرے یا ملک پر اس سے بڑا عذاب اور کیا ہو سکتا ہے جس کے عالم مولانا فضل الرحمان جیسے ہوں اور لیڈر نواز شریف زرداری جیسے ہوں مستقبل کے لیڈر بلاول اور مریم ہوں
میری اللہ تعالی سے دعا ہے میرے وطن عزیز پر کرم فرما ان مسخروں سے میری قوم کو بچا !!!

50% LikesVS
50% Dislikes