جشن آزادی کے موقع پر وطن کو پاکستان کا نام دینے والی شخصیت کو نہیں بھولنا چاہیئے؛ زاہد چوہدری – Kashmir Link London

جشن آزادی کے موقع پر وطن کو پاکستان کا نام دینے والی شخصیت کو نہیں بھولنا چاہیئے؛ زاہد چوہدری

لندن (کشمیر لنک نیوز) برطانیہ میں مقیم پاکستانی یوم پاکستان کی تقریبات مناتے ہوئے جہاں آزادی کی نعمت کے گن گاتے ہیں وہیں وطن عزیز کا نام تجویز کرنے والی شخصیت چوہدری رحمت علی کو بھی نہیں بھولتے۔ جشن آزادی ہو یا پاکستان کا کوئی اور اہم دن برٹش پاکستانی کیمبرج میں مدفون چوہری رحمت علی کی قبر پر حاضری ضرور دیتے ہیں اور انکی روح کے ایصال ثواب کیلئے فاتحہ خوانی بھی کرتے ہیں۔

لندن، لوٹن، سلائو اور سکاٹ لینڈ سے متعدد افراد نے اس سال بھی جشن آزادی کے موقع پر مرقد چوہدری رحمت علی پر حاضری دی اور انکی قومی و ملی خدمات کو خراج عقیدت پیش کیا۔ ان شخصیات کا کہنا تھا کہ باشعور قومیں اپنے محسنین کی خدمات کو کبھی فراموش نہیں کرتیں بلکہ ہمیشہ یاد رکھتی ہیں۔ تحریک پاکستان کے بانیوں میں سے ایک اور پاکستان کا نام تجویز کرنے والے چوہدری رحمت علی حقیقی معنوں میں پاکستان کے ہیرو اور محسن ہیں، جنہوں نے 1915ءمیں پہلی مرتبہ اسلامیہ کالج لاہور میں بزم شبلی کے افتتاحی اجلاس میں یہ تجویز پیش کی تھی کہ ہندوستان کے شمالی علاقوں کو ایک مسلم ریاست میں تبدیل کردیا جائے۔
کمیونٹی رہنمائوں زاہد چوہدری، طارق چوہدری، شہباز علی و دیگر کا کہنا تھا چوہدری رحمت علی نے اپنا

منفرد نظریہ پیش کرتے ہوئے کہا تھا کہ ہندوستان کا شمالی منطقہ اسلامی علاقہ ہے ، ہم اسے اسلامی ریاست میں تبدیل کریں گے ، لیکن یہ اس وقت ہو سکتا ہے جب اس علاقے کے باشندے خود کو باقی ہندوستان سے منقطع کر لیں۔ اسلام اور خود ہمارے لئے بہتری اسی میں ہے کہ ہم ہندوستانیت سے جلد سے جلد جان چھڑا لیں۔
ان رہنمائوں کا کہنا تھا کہ بالاآخر 14 اگست 1947ءکو چوہدری رحمت علی کے تجویز کردہ نام کو تعبیر مل گئی، پاکستان معرض وجود میں آگیا، مگرآپ پاکستان کی جغرافیائی حیثیت سے مطمئن نہ تھے، لندن میں اپنے قیام کو مختصر کرکے ایک دفعہ اسی سلسلے میں اپریل 1948ءمیں آپ پاکستان تشریف لائے لیکن قائد اعظم کی وفات کے بعد مسلم لیگی قیادت کے روئیے سے مایوس ہوکر واپس انگلستان لوٹ گئے جہاں 29جنوری1951ء کو نمونیہ کے مرض میں مبتلا ہو گئے اور 3 فروری کے دن شدید بیماری کی حالت میں کیمبرج کے ایک ہسپتال میں غریب الوطنی دار فانی سے کوچ کرگئے۔

چوہدری رحمت علی مرحوم کے مرقد پر حاضری دینے والے وفد کے دیگر ارکان میں عیسیٰ چوہدری، ریحان چوہدری، صوفی راجہ رشید، اشفاق چوہدری، ارسلان ارشد چوہدری، سلائو سے راجہ نثار، راجہ شوکت ، چوہدری غلام مرتضیٰ اور ایڈنبرا سے یاسر چوہدری شامل تھے۔ انکا کہنا تھا چوہدری رحمت علی کے وطن کو نام اور مقام تو مل گیا لیکن خود انہیں وطن میں دوگز زمین نہ مل سکی، ہم اہل اقتدار سے درخواست کرتے ہیں کہ انکا جسد خاکی یہاں سے پاکستان لیکر مینار پاکستان کے سائے تلے دفن کیا جائے۔

50% LikesVS
50% Dislikes