کشمیر عالمی مسئلہ ہے، سنگینی کے پیش نظرعالمی برادری کو فوری حل کرانا ہو گا؛ کشمیر کانفرنس کا اعلامیہ – Kashmir Link London

کشمیر عالمی مسئلہ ہے، سنگینی کے پیش نظرعالمی برادری کو فوری حل کرانا ہو گا؛ کشمیر کانفرنس کا اعلامیہ

مانچسٹر (محمد فیاض بشیر) جموں و کشمیر تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے زیر اہتمام آزاد کشمیر کے یوم تاسیس کے موقع پر”کشمیر ورچوئل کانفرنس“ کا انعقاد، کانفرنس کے ذریعے مقبوضہ کشمیر کی صورتحال، بھارتی بربریت، غیر آئینی اقدامات، انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں اور عالمی معاہدوں کو سبوتاژ کر کے کشمیریوں پر بدترین مظالم کا اجاگر کیا گیا۔
کشمیر ورچوئل کانفرنس کے مہمان خصوصی مانچسٹر میں پاکستان کے قونصل جنرل طارق وزیراور برطانیہ کے شیڈو وزیر دفاع ایم پی خالد محمود تھے جبکہ کانفرنس کی صدارت ایم پی جیمز ڈیلی شریک چیئر مین کنزرویٹو فرینڈز آف کشمیر نے کی۔ میزبانی و سربراہی راجہ نجابت حسین چیئر مین تحریک حق خود ارادیت کررہے تھے۔


یوم تاسیس کے موقع پر ورچوئل کشمیر کانفرنس میں صدر آزاد کشمیر سردار مسعود خان، وزیر اعظم راجہ محمود فاروق حیدر خان،ممبران برطانوی و یورپین پارلیمنٹ، کشمیری و پاکستانی رہنماؤں اور انسانی حقوق کے لئے متحرک شخصیات نے بھی شرکت کی۔
جموں و کشمیر تحریک حق خود ارادیت کیسفارتی محاذ پر سرگرمیاں تسلسل کے ساتھ جاری ہیں۔ مسئلہ کشمیر کے حوالے سے دنیا کے بڑے پارلیمان، فورمز اور اداروں کے ممبران میں سفارتی مہم کے تحت لابی کی جا رہی ہے۔ کشمیر ورچوئل کانفرنسیں بھی اسی مہم کا تسلسل ہیں تا کہ زیادہ سے زیادہ برطانوی و یورپی ممبران پارلیمنٹ اور دیگر اداروں کے مندوبین کو مسئلہ کشمیر کے حوالے سے متحرک کیا جا سکے۔ آزاد کشمیر کے یوم تاسیس کے موقع پر ”کشمیر ورچوئل کانفرنس“ میں اپنے پیغامات کے ذریعے مقررین نے کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کو روکنے کے لئے بھارت پر دباؤ ڈالنے سمیت کشمیریوں کے بنیادی حقوق کے لئے کھڑے ہونے کا وعدہ کیا۔


کانفرنس میں تحریک حق خود ارادیت کی جانب سے آزادکشمیر کے بانیصدر غازی ملت سردار محمد ابراہیم خان کو ان کی خدمات پر خراج عقیدت پیش کیا گیا، تمام شرکاء نے سفارتی محاذ پر تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کی ٹیم کو بین الاقوامی سطح پر مسئلہ کشمیر پر بھرپور محنت اور کوششیں کرنے پر خصوصی خراج تحسین پیش کیا۔اس موقع پر صدر آزادکشمیر سردار مسعود خان سفارتی سطح پر کشمیری کی تسلسل کے ساتھ کوششیں خوش آئند ہیں۔ راجہ نجابت حسین اور ان کی ٹیم جس طرح مسلسل کاوشیں کر رہی ہیں ہم انہیں خراج تحسین پیش کرتے ہیں۔ تمام کشمیریوں کی جدو چاہئے وہ ڈائس پورہ میں ہے یا کشمیر میں ہم سب کی ایک ہی آواز ہے کہ کشمیر ایک متنازعہ علاقہ ہے اور بھارت اس پر ناجائز طور پر قابض ہے۔ بھارت کشمیر میں تمام تر بین الاقوامی معاہدوں اور قوانین کو سبوتاژ کر کے اقدامات اٹھانے کے ساتھ ساتھ کشمیریوں کو ریاستی طاقت کے ذریعے بدترین بربریت کا نشانہ بنا رہا ہے۔
کشمیر پر آل پارٹیز پالیمانی گروپ کے صدر لارڈ نذیر احمد نے کہا کہ بھارت کے قبضہ کو آ ج نہیں بلکہ 74برس قبل دنیا نے اس قبضہ کو ناجائز قرار دیا تھا اور کشمیریوں کو ان کا حق فراہم کرنے کی قرارداد منظور کی تھی۔آج مودی کی فاشسٹ گورنمنٹ 70سالہ تاریخ کو تبدیل کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔ پاکستان کا میڈیا صرف دن بنانے کی خبریں دینے کی بجائے بھارتی میڈیا کے مقابلے میں آگاہی کے لئے مؤثر کردار ادا کرے۔


اس موقع پر برطانوی پارلیمنٹ میں کشمیر پارلیمنٹری گروپ کی چیئرپرسن ایم پی ڈیبی ابراہم،کشمیر پارلیمنٹری گروپ کے سینئر وائس چیئرمین و شیڈو وزیر بیرسٹر عمران حسین، کشمیر پارلیمنٹری گروپ کے سیکرٹری لارڈ قربان حسین، بیرونیس نوشینہ مبارک،شیڈو ڈپٹی لیڈر آف ہاؤس آف کامنز ایم پی افضل خان، شیڈو وزراء ایم پی ٹریسی برابن،ایم پی الیکس سوبل، چیئرمین لیبر فرینڈز آف کشمیر ایم پی اینڈریو گو ون،شیڈو سیکرٹری ایم پی جم مکماہن، ایم پی رچرڈ برگن، یورپی پارلیمنٹ کے سابق ممبران اور یورپین فرینڈز آف کشمیر کے شریک چیئرپرسن اینتھیامیکنٹائیر اور رچرڈ کاربٹ نے خصوصی طور پر اپنے پیغامات میں کہا کہ 74سال سے کشمیر میں بدترین ظلم و ستم جاری ہیں لیکن عالمی برادری کشمیریوں کو ان کا بنیادی تسلیم شدہ حق خودارادیت نہ دلا سکی۔ ہمیں کشمیریوں کے ساتھ کھڑا ہونا ہو گا اور ۔ کشمیر میں بھارت کی جانب سے انسانی حقوق کی بدترین خلاف ورزیوں کو روکنے کے لئے مضبوط آواز بننا ہو گا۔کشمیر میں لاک ڈاؤن کر کے کشمیریوں بالخصوص نوجوانوں کو نشانہ بنایا جا رہا ہے۔ہمیں نا صرف برطانیہ بلکہ اب دنیا کو بھی یہ باور کرانا ہے کہ کشمیر کوئی پاکستان اور بھارت کا دو طرفہ ایشو نہیں بلکہ یہ عالمی مسئلہ ہے اور اس کی سنگینی کا ادراک کرتے ہوئے عالمی برادری کو فوری حل کرنا ہو گا۔ کشمیریوں کا جائز مطالبہ حق خودا رادیت ہے جسے ایک نا ایک دن بھارت کو تسلیم کرنا ہو گا۔ ہم کشمیریوں کے حق خودا رادیت کے ساتھ کھڑے ہیں اور ان کے مؤقف کی نا صرف پارلیمنٹ کے اندر بلکہ پارلیمنٹ کے باہر اور دنیا میں بھی ہر سطح پر آواز اٹھائیں گے۔
اس موقع پر مقررین نے راجہ نجابت حسین اور ان کی ٹیم جس طرح کشمیریوں کی آواز بنے ہوئے ہیں اور اپنی تمام تر توانائیاں صرف کر رہے ہیں یہ خراج تحسین کے لائق ہے۔ کشمیر ورچوئل کانفرنس کے موقع پر تحریک حق خود ارادیت کے سرپرست اعلیٰ سردار عبد الرحمن خان،پروگرام ڈائریکٹر ہیری بوٹا، عبیدالرحمن قریشی صدر یوتھ پارلیمنٹ آف پاکستان، کونسلر یاسمین ڈار ممبر قومی ایگزیکٹو کمیٹی لیبر پارٹی، ماریہ اقبال ترانہ ایگزیکٹو ڈائریکٹر یوتھ فار آزادکشمیر، بحریہ یونیورسٹی سے ڈاکٹر سائرہ کاظمی اور کونسلرنازیہ رحمان نے بھی کانفرنس سے خطاب کیا۔
دریں اثنا یوم تاسیس کے موقع پر جموں و کشمیر تحریک حق خودارادیت کی ٹیم نے کورونا وائرس کی وجہ سے اجتماعات اور مظاہروں پر پابندیوں کے باوجود بریڈ فورڈ سٹی کونسل کے سامنے کونسلرز کے ہمراہ کشمیری پرچم کشائی اور پرچم لہرانے کا پروگرام کیا۔ بریڈ فورڈ کی سٹی کونسل کے سامنے تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے چیئرمین راجہ نجابت حسین، سابق لارڈ مئیر بریڈ فورڈ راجہ غضنفر خالق، کونسلر کامران حسین، برٹش مسلم وومنز فورم کی چیئرپرسن کونسلر صبیحہ خان، مس مسرت نے کورونا ایس او پی کو مد نظر رکھ کر کشمیری پرچم لہرایا اور یہ میسج دیا کہ دنیا بھر میں مقیم کشمیری مقبوضہ کشمیر کے بھائیوں اور بہنوں کے ساتھ کھڑے ہیں اوربھارتی بربریت، جبر اور ظلم کے خلاف جدو جہد آزادی میں ان کے شانہ بشانہ ہیں۔

50% LikesVS
50% Dislikes