فراڈ کا الزام، فرانسیسی ممبر یورپی پارلیمنٹ نے پاکستانی پناہ گزینوں پر پابندی کا مطالبہ کردیا – Kashmir Link London

فراڈ کا الزام، فرانسیسی ممبر یورپی پارلیمنٹ نے پاکستانی پناہ گزینوں پر پابندی کا مطالبہ کردیا

برسلز (کشمیر لنک نیوز) ممبران یورپی پارلیمنٹ نے ویزہ فراڈ میں پاکستان پر پابندیاں عائد کرنے کا مطالبہ کردیا ہے، اس تحریک کا آغاز ڈیمینک بلدے ایم ای پی کی طرف سے پیش کردہ ایک رپورٹ کے بعد ہوا ہے جس میں انکشاف کیا گیا ہے کہ پاکستان ایک ایسا ملک ہے جو ناصرف یورپی یونین کے پاسپورٹس کی فروخت میں ملوث ہے بلکہ مجرمانہ سرگرمیوں میں شامل افراد کو ویزے بھی جاری کرتا ہے۔
ڈومینک بلڈے نے پاکستان پر یورپی یونین کے ویزے اور پاسپورٹ کے فراڈ کا الزام لگاتے ہوئے کہا ہے کہ جعلی دستاویزات کے ذریعے مجرمانہ سرگرمیوں میں ملوث افراد کے یورپ میں داخلے سے سلامتی کے خطرات بڑھ گئے ہیں۔


رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ رکن پارلیمنٹ کے مطابق پاکستان جعلی پاسپورٹ اور جعلی دستاویزات بنانے میں سب سے آگے ہے۔ بلڈے کا یہ بھی کہنا ہے کہ یہ وہ ملک ہے جو 2014 سے اب تک چار بلین یورو کی امداد حاصل کر چکا ہے۔ ہم کچھ ملکوں کی مدد کرتے ہیں اور وہ اسلامی دہشت گردی کی حمایت کرتے ہیں۔
یہ ایشو ایسے موقع پر سامنے آیا ہے جب پیرس میں حالیہ دنوں میں پیغبراسلام کے خاکے شائع کرنے والے جریدے کے سابقہ دفتر کے سامنے ایک نوجوان نے حملہ کر کے دو افراد کو ہلاک کر دیا تھا۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق حملے میں ملوث شخص پاکستان کا شہری تھا اور اس نے غیر قانونی طور پر فرانس میں داخل ہونے کے بعد دھوکہ دہی پر مبنی کاغذات کے ذریعے فرانس کی شہریت حاصل کی تھی۔


ڈومینک بلڈے کی طرح یورپی یونین کے کئی دوسرے ارکان نے بھی اس سلسلے میں اپنی تشویش کا اظہار کرتے ہوئے فرانسیسی حکومت اور یورپی یونین کو ایک خط لکھا ہے۔ ان ارکان میں فُلوِیو مارٹوشیئلو، ریزارڈ زارنیکی اور جیانا گارسیا شامل ہیں۔ خط میں کہا گیا ہے کہ پاکستان میں دہشت گردی کی سرگرمیوں کے پیش نظر اس ملک پر پابندی لگائی جائے۔
یہ مشترکہ خط فرانس کے صدر ایمانوئل میکرون، یورپی یونین کونسل کے صدر چارلس مشیل اور یورپی یونین کمشن کے صدر کو بھی بھیجا گیا ہے۔

ہم فرانس کی حکومت اور یورپی یونین سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ پاکستان سے ابھرنے والی دہشت گردی کی سرگرمیوں کے خلاف پابندیاں عائد کریں۔ فرانس، یورپ اور دنیا، کسی اور معصوم شہری کے قتل اور دہشت گردی کے خوف میں رہنے کی متحمل نہیں ہو سکتی۔
واضع رہے یہ خط گذشتہ روز نیس میں ہونے والے واقعے سے پہلے لکھا گیا اور اس خط کے بعد پاکستان کی طرف سے فرانسیسی مصنوعات کے بائیکاٹ پر ڈومینک بلدے نے اپنی ایک ٹویٹ میں کہا ہے کہ پاکستان اگر فرانسیسی مصنوعات کا بائیکاٹ کرنے کا کہہ رہا ہے تو ہمیں بھی اسکے لوگوں کو فرانس آنے پر پابندی عائد کردینی چاہیئے اور انہیں کھلے دل سے پناہ دینے کا حق واپس لے لینا چاہیئے۔

50% LikesVS
50% Dislikes