برطانوی پارلیمنٹ میں کشمیر ایشو پر مدلل انداز میں مقدمہ پیش کرکے لارڈ قربان نے دل جیت لئے – Kashmir Link London

برطانوی پارلیمنٹ میں کشمیر ایشو پر مدلل انداز میں مقدمہ پیش کرکے لارڈ قربان نے دل جیت لئے

لندن (محمد فیاض بشیر) برطانوی ہاؤس آف لارڈ کے رکن لارڈ قربان حسین کو برطانوی پارلیمنٹ میں بھارت میں جاری انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کو بھرپور طریقے سے اُجاگر کرنے اور معروف کشمیری حریت راہنما یاسین ملک کی رہائی کے لئے آواز بلند کرنے پر مختلف شخصیات اور تنظیموں کیطرف سے خراج تحسین پیش کیا جارہا ہے۔ ملکہ برطانیہ کی پلاٹینم جوبلی سالگرہ سے قبل بلائے گئے پارلیمنٹ کے اہم اجلاس میں لارڈ قربان حسین کی جانب سے مقبوضہ کشمیر میں جاری انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کو اُجاگر کرنے کے سلسلہ میں اور معروف کشمیری حریت راہنما یاسین ملک کی بھارت میں غیر قانونی حراستگی کے بارے میں انتہائی اہم سوالات اُٹھائے گئے تھے۔

لارڈ قربان نے سوال اُٹھایا کہ بہت سے کشمیریوں کویقین ہے کہ ماضی میں بھی بھارت نے جھوٹے اور من گھڑت الزامات لگا کر بھارتی عدالتوں کے زریعے شہرت یافتہ کشمیری راہنماؤں مقبول بھٹ اور افضل گورو کی پھانسی پر چڑھایا۔لارڈ قربان نے کہا کہ بھارت نے اس مرتبہ ایک اور معرو ف مشہور کشمیری راہنما یاسین ملک کا ٹرائل جاری رکھا ہوا ہے اور یاسین ملک کے بیشمار پیروکار برطانیہ میں بھی موجود ہیں جو یہ سمجھتے ہیں کہ بھارت کے اس طرح کے اقدامات سے یاسین ملک کی زندگی کو شدید خطرات لاحق ہیں اور کشمیری قوم کو اس پر سخت تشویش ہے۔ کیا برطانوی حکومت اپنے اداروں کو حرکت میں لائے گی تا کہ یاسین ملک کی حفاظت کو یقینی بنایا جا سکے اور ان کی رہائی کو ممکن بنایا جا سکے۔

بر طانوی حکومت کے وزیر لارڈ طارق احمد نے کہا کہ وہ یاسین ملک کے ٹرائل کے بارے میں مکمل طور پر آگاہ ہیں ہم جانتے ہیں کہ یاسین ملک کو بھارت کے قانون کے مطابق چارج کیا گیا ہے اور ہم نہیں چاہتے کہ ہم بھارت کی عدالتی معاملات میں کسی بھی قسم کی کوئی مداخلت کریں۔ تاہم وہ چاہتے ہیں کہ انسانی حقوق کی پامالیوں کے معاملے کی تفصیلی تحقیقات ہونی چاہیے اور اس سلسلہ میں وہ پاکستانی اور بھارتی حکومت سے بات چیت کریں گے۔

جموں کشمیر تحریک حق خود ارادیت انٹرنیشنل کے بانی چیئرمین راجہ نجابت حسین نے کہا ہے کہ وہ برطانیہ، یورپ، پاکستان، آزادجموں و کشمیر اور دیگر عالمی فورمز پر مسئلہ کشمیر کو اُجاگر کرنے کے سلسلہ میں اور مسئلہ کشمیر کا فوری، پرامن اور دیر پا حل تلاش کرنے کے لئے کوشاں ہیں اور مضبوط عالمی لابی کرتے چلے آ رہے ہیں اور لارڈ قربان حسین کا برطانوی پارلیمنٹ میں سوالات اُٹھانا بھی جموں کشمیر تحریک حق خود ارادیت انٹرنیشنل کی مضبوط لابی کا نتیجہ ہے۔ راجہ نجابت حسین نے اپنی تحریک کی پوری ٹیم کو مبارک بادپیش کی اور کہا کہ ہماری پوری ٹیم دن رات انتھک محنت کر کے مسئلہ کشمیر کو مختلف بین الاقوامی فورمز پر بلند کر رہی ہے اور سیاسی، سماجی اور دیگر با اثر راہنماؤں کے ساتھ مل کر بین الا قوامی لابی کی جا رہی ہے اور بھارت پر ہر طرح کا سیاسی، سماجی اور سفارتی دباؤ بڑھایا جا تا رہے گا۔

راجہ نجابت حسین کا مزید کہنا تھا کہ بھارت نے ابھی تک عالمی برادری کی بات نہیں مانی اور نہ ہی بھارت نے عالمی برادری کو مقبوضہ کشمیر میں جانے کی اجازت دی ہے۔ بھارت نے تمام عالمی انسانی حقوق کی تنظیموں، صحافتی تنظیموں، سیاسی اور سماجی تنظیموں غرض یہ کہ ہر قسم کے عالمی امن پسند لوگوں کو مقبوضہ کشمیر میں جانے سے روک رکھا ہے تا کہ اصل حقائق دنیا سے چھپائے جا سکیں اور بھارت ڈرتا ہے کیوں کہ بھارت نے اپنے غیر قانونی قبضہ کے دوران لاکھوں کی تعداد میں کشمیریوں کو شہید کر دیا ہے اور گمنام قبروں کا جال بچھایا ہوا ہے۔ مقبوضہ کشمیر میں کوئی بھی انسان کسی بھی عمر کا انسان بھارتی تشدد اور بربریت سے محفوظ نہیں ہے۔

50% LikesVS
50% Dislikes