پاکستان میں سرمایہ کاری کے بڑے مواقع موجود ہیں، ہائی کمیشن لندن کے ویبینار میں شرکا کی تائید – Kashmir Link London

پاکستان میں سرمایہ کاری کے بڑے مواقع موجود ہیں، ہائی کمیشن لندن کے ویبینار میں شرکا کی تائید

لندن (عمران راجہ) پاکستان ہائی کمیشن لندن میں پاک برطانیہ بزنس کونسل اور برٹش ایکسپرائز انٹرنیشنل کے اشتراک سے ’’پاکستان میں کاروبار کرنا‘‘ کے عنوان سے ایک ویبنار کا اہتمام کیا گیا۔ ویبنار میں برطانوی تاجروں اور دوسرے بین الاقوامی سرمایہ کاروں کے لئے تجارت اور سرمایہ کاری کے مواقع پر روشنی ڈالی گئی۔

اس موقع پر برطانیہ میں پاکستان کے ہائی کمشنر معظم احمد خان نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ معاشی مشکالات کے بعد اب پاکستان پائیدار معاشی ترقی کی طرف گامزن ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کے زرمبادلہ کے ذخائر دوگنا ہو چکے ہیں۔ اسکے علاوہ انہوں نے ترسیلات زر ، برآمدات اور پورٹ فولیو سرمایہ کاری میں اضافے ، اور اسٹاک ایکسچینج کو دنیا کے بہترین اداروں میں شامل ہونے سے متعلق شرکا کو آگاہ کیا۔

ویبینار کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے ہائی کمشنر نے سرمایہ کاروں کے لئے ون ونڈو سہولت ،آزادانہ مالی اور مالیاتی مراعات ، کاروباری اصلاحات میں جامع آسانی اور صنعتی کاری کو فروغ دینے کے لئے درآمدات پر کم ٹیرف کے بارے میں بات کی۔ ہائی کمشنر نے برطانوی سرمایہ کاروں کو پاکستان میں سبز سرمایہ کاری کے مواقع سے فائدہ اٹھانے کی دعوت دی۔ اس کے علاوہ انہوں نے برطانیہ کے کاروبار کے لئے ملک کے آئی ٹی ، انجینئرنگ اور توانائی کے شعبوں میں بھی مواقع پر روشنی ڈالی۔

پاکستان میں کاروبار کرنے کے امکانات پر تبادلہ خیال کرتے ہوئے ، مقررین نے بنیادی ڈھانچے کے منصوبوں ، خاص طور پر سبز بنیادی ڈھانچے میں جہاں سرمایہ کاری کا زیادہ سے زیادہ استعمال کیا جاسکتا ہے ، میں سرمایہ کاری کی بڑی صلاحیتوں پر روشنی ڈالی۔ اس کے علاوہ انہوں نے پاکستان کو ایک ابھرتی ہوئی مارکیٹ قرار دیا جس میں انفراسٹرکچر ڈویلپمنٹ ، اسپیشلسٹ انجینئرنگ ، ہیلتھ کیئر ، تعلیم ، سیاحت اور مہمان نوازی ، آئی ٹی ، ٹیکسٹائل ، فوڈ پروسیسنگ ، لاجسٹک اور دیگر صنعتوں اور شعبوں میں نمایاں مواقع موجود ہیں۔ انہوں نے پاکستان میں سرمایہ کاری کے لئے کاروباری اصلاحات کرنے پر حکومت پاکستان کی بھی تعریف کی۔

ویبنار میں جن سرمایہ کاروں ، سرکاری عہدیداروں اور اسٹیک ہولڈرز نے بھی خطاب کیا ان میں سی بی ای کی بیرونس نوشینا موبارک بھی شامل تھیں۔جبکہ پاکستان میں برطانیہ کے ڈپٹی ہائی کمشنر اور تجارت کے ڈائریکٹر مسٹر مائک نیتھاوریاانیس؛ سینئر انفراسٹرکچر ایڈوائزر مسٹر کیمبل کیئر ، برٹش ایکسپرائز انٹرنیشنل؛ سوسانا کوردوبہ ، گریٹر مانچسٹر چیمبرز آف کامرس کے بین الاقوامی تجارت کے سربراہ حسن داؤد بٹ ، سی ای او کے پی بورڈ آف انویسٹمنٹ اینڈ ٹریڈ ڈاکٹرعرفہ سی ای او پنجاب بورڈ آف انویسٹمنٹ اینڈ ٹریڈ اور پاکستان ہائی کمیشن لندن میں تعینات منسٹر ٹریڈمحمد شفیق شہزاد ، چیئرمین پاکستان برطانیہ بزنس کونسل جولین ہیملٹن بارنس نے بھی ویبنار سے خطاب کیا۔

مقررین نے برطانیہ کے سرمایہ کاروں پر زور دیا کہ وہ پاکستان کو انویسٹمنٹ ریڈار پر رکھیں اور اپنے لئے نفع بخش مواقع تلاش کرنے کے لئے ملک کا دورہ کریں۔ آخر میں تین عمائدین نے پاکستان میں کاروباری سرگرمیوں کی کامیابی کی مثالیں بھی ویبینار کے شرکاء کے ساتھ شیئر کیں۔

50% LikesVS
50% Dislikes