لاک ڈائون کے بعد انگلینڈ واپس آنے والے ایئر پورٹ پر چھ گھنٹے تک قطار میں رہنے کیلئے تیار رہیں – Kashmir Link London

لاک ڈائون کے بعد انگلینڈ واپس آنے والے ایئر پورٹ پر چھ گھنٹے تک قطار میں رہنے کیلئے تیار رہیں

لندن(کشمیر لنک نیوز) ایک یونین نے متنبہ کیاہے کہ انگلینڈمیں کورونا کی پابندیوں میں نرمی کے بعد واپس آنے والوں کو ایئرپورٹ پر 6 گھنٹے تک قطار میں کھڑے رہنا پڑسکتاہے، دونوں ویکسین لگوالینے والے امبر لسٹ میں شامل ممالک سے واپس آنے والوں کو 19 جولائی سے قرنطینہ کی ضرورت نہیں ہوگی، امیگریشن سروس یونین کا کہناہے کہ بڑی تعداد میں لوگوں کی واپسی اور بارڈر فورس کے افسران کی کمی کی وجہ سے چیکنگ سست ہوگی ،ٹرانسپورٹ کے وزیر گرانٹ شیپس نے بھی تسلیم کیاہے کہ سفر میں خلل پڑسکتاہے لیکن ان کاکہناہے کہ ایئرپورٹس ،ایئرلائنز ،ٹرین اور فیری کمپنیاںمسافروں کی سہولت اور قطار میں کمی کرنےکیلئے ایپ تیار کررہی ہیں۔

جمعرات کو قرنطینہ میں نرمی کے بعدتعطیلات منانے والوں کی تعداد میں اضافہ ہوگیا ہے تعطیلات منانے والوں کے مقبول ممالک میں اسپین،فرانس ،اٹلی اور امریکہ شامل ہیں،ان ممالک کو جانے والوں کو 19جولائی سے قرنطینہ کی ضرورت نہیں ہوگی لیکن انھیں اپنے پاسپورٹ کے ساتھ 3 اضافی ڈاکومنٹس ،ایک پسنجر لوکیٹر فارم ،کورونا سے متاثرہ افراد سے ممکنہ ملاقات سے متعلق مانیٹرنگ ،اور کورونا ٹیسٹ منفی آنے کا تازہ ترین ثبوت اور اس بات کا ثبوت کہ انھوں نے کم از کم 14 روز قبل ویکسین لگوائی تھی۔

شمالی آئرلینڈ میں 26 جولائی سے ان ہی شرائط پر عمل ہوگاجبکہ ویلز اور اسکاٹ لینڈ کاکہناہے کہ ابھی وہ غور کریں گے کہ انھیں کیاکرنا ہے ،امیگریشن سروس یونین کے پروفیشنل افسر کا کہناہے کہ حکومت کو مسافروں کی بڑھتی ہوئی تعداد کے پیش نظر بارڈر فورس کے مزید افسر بھرتی کرنے چاہئیں۔انھوں نے کہا کہ عام پاسپورٹ کی چیکنگ میں2 سے 4 منٹ لگتے ہیں لیکن جب معاملہ کورونا سے متعلق ڈاکومنٹس کا ہو تو پھر اس عمل میں 12 منٹ لگ جاتے ہیں ،انھوں نے کہا کہ فی الوقت ہم دیکھ رہے ہیں کہ بعض جگہ قطار مین مسافروں کو ایک سے 2 گھنٹے لگ رہے ہیں اورمسافروں کی تعداد میں اضافہ سے انتظار کے وقت میں مزید اضافہ ہوجائے گااور ایئرپورٹ پر قطاروں میں تین گنا تک زیادہ اضافہ ہوسکتاہے ۔ایک سرکاری ترجمان کا کہناہے کہ اولین ترجیح عوام کی صحت ہے وقتی طورپر مسافروں کو سفر کے ہر مرھلے میں کچھ زیادہ وقت لگے گا ،انھوں نے کہا کہ بعض پابندیاں اب بھی برقرار ہے ہم پورے عمل کو زیادہ آسان بنانے کیلئے کام کررہے ہیں ۔

50% LikesVS
50% Dislikes