بھارتی یوم جمہوریہ پر برطانیہ بھر میں کشمیریوں اور سکھوں کے مشترکہ مظاہرے، بھارتی مظالم کے خلاف نعرے بازی – Kashmir Link London

بھارتی یوم جمہوریہ پر برطانیہ بھر میں کشمیریوں اور سکھوں کے مشترکہ مظاہرے، بھارتی مظالم کے خلاف نعرے بازی

لندن (اکرم عابد) برطانیہ میں مقیم کشمیریوں نے بڑے پیمانے پر بھارت کے یوم جمہوریہ کو یوم سیاہ کے طور پر منا کر اپنا احتجاج ریکارڈ کروایا۔ برطانوی دارالحکومت لندن میں انڈین ہائی کمیشن کے باہر کشمیریوں اور سکھوں نے مشترکہ احتجاجی مظاہرہ کیا اور نعرے لگا کر بھارت کے نام نہاد جمہوری چہرے کا پردہ چاک کیا۔ مظاہرے میں شریک رہنمائوں کا کہنا تھا کہ جنگی جرائم اور انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں میں ملوث بھارت کو سب سے بڑی جمہوریت ہونے کا دعویٰ کرنے کا کوئی حق نہیں۔
مظاہرے کا اہتمام تحریک کشمیر اور سکھ فار جسٹس نے کیا تھا۔ اس موقع پر بھارتی آئین کی کاپی کو نذر آتش بھی کیا گیا۔

مظاہرے میں شریک رہنمائوں راجہ سکندر، طارق محمود، پرم جیت سنگھ، چوہدری شریف، ریحانہ علی اقدس مغل و دیگر کا کہنا تھا کہ بھارتی فوجیوں نے 25جنوری 1990 کو ہندواڑہ قصبے میں اپنے ناقابل تنسیخ حق، حق خودارادیت کا مطالبہ کرنے پر کم از کم 26پرامن مظاہرین کو گولیاں مار کر شہید اور سینکڑوں کو زخمی کر دیا تھا۔انھوں نے کہا کہ اب وقت آ گیا ہے کہ مقبوضہ جموں وکشمیر کی آزادی کیلئے کوششیں مزید تیز کرنی چاہئیں۔دنیا کے تمام امن پسند ملکوں کو بھارت کا مکروہ چہرہ بے نقاب کرنا ہو گا۔

دریں اثنا تحریک حق خودارادیت انٹرنیشنل کے چیئر مین راجہ نجابت نے اس حوالے سے میڈیا کو جاری کردہ ایک بیان میں کہا کہ بھارت کی جانب سے مقبوضہ جموں وکشمیر کے اندر جاری ظلم وستم کا بازار دن بدن بڑھتا ہی جا رہا ہے، ہم سب کو مل کر مقبوضہ جموں وکشمیر کے اندر مظالم کو رکوانے کے لئے اپنی آواز بلند کرنا ہو گی۔مقبوضہ جموں وکشمیر کے اندر انٹرنیٹ سروس معطل ہے، سرچ آپریشن اور محاصروں اور تلاشی کی کارروائیوں میں تیزی آگئی ہے، بھارت مسلسل انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں میں ملوث ہے۔انھوں نے مزید کہا کہ مقبوضہ جموں وکشمیر کی خصوصی حیثیت منسوخ کرنے کے بعد بھارتی فوج کی طرف سے انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر بڑے پیمانے پر تیزی دیکھنے میں آئی ہے۔

50% LikesVS
50% Dislikes