کاروباری طبقے کو مزید ریلیف دینے کیلئے حکومت برطانیہ کو نئی لون سکیم کی تجویز – Kashmir Link London

کاروباری طبقے کو مزید ریلیف دینے کیلئے حکومت برطانیہ کو نئی لون سکیم کی تجویز

لندن (کشمیر لنک نیوز) حکومت برطانیہ کورونا وبا کے دوران معیشت کو ہونے والے نقصان کا مسلسل جائزہ لے رہی ہے، عوام کو فرلو سکیم سے گھر بیٹھے تنخواہ دینے کیساتھ ساتھ آسان شرائط پر اپنی گارنٹی سے قرضوں کی فراہمی تک کے سبھی عمل کی کڑی نگرانی کی جارہی ہے۔
حال ہی میں قرضوں کی اجرائیگی کرنے والے شعبے نے حکومت کو خبردار کیا ہے کہ حالیہ اسکیم کی طے کی گئی شرائط پر مکمل عملدراآمد نہ ہونے سے معیشت کو شدید دھچکا پہنچ سکتا ہے اسکے ساتھ ہی حکومت کو تجویز دی گئی ہے کہ اس خدشے سے نبٹنے کیلئے عوام کو طلبہ کی طرز پر قرضے فراہم کئے جاسکتے ہیں۔
اس سکیم کے تحت کورونا وائرس کے قرضے ٹیکس ڈیبٹ میں تبدیل کئے جا سکیں گے جن کی دوبارہ ادائیگی ایک دہائی میں ہوگی۔
سٹوڈنٹ لونز کی طرح، رقم صرف اس صورت میں قابل ادائیگی ہوگی جب بزنس انہیں برداشت کر نے کی پوزیشن میں ہوں۔ بینکس چاہتے ہیں کہ اس سکیم کو ایچ ایم ریونیو اینڈ کسٹمزکے زیر انتظام چلایا جائے۔
اسطرح ایچ ایم آر سی کو ایک آپریشنل قوت حاصل ہوگی، موجودہ ریلیشن شپ اور مناسب معلومات کے ساتھ کمپنیاں اس وسیع پروگرام کے تحت چلائی جا سکیں گی۔
بینکنگ انڈسٹری لابنگ گروپ دی سٹی یوکے نے ایک ریکوری کارپوریشن قائم کرنے کی تجویز بھی دی ہے، جس کے ذریعے کمپنیاں اپنے مختصر مدتی قرض ایچ ایم آر سی کو طویل المدت ادائیگی کی شکل میں تبدیل کرا سکیں گی اور ان کی ادائیگی اس وقت کی جائیگی جب ان کے پاس وافر رقم ہوگی جیسا کہ سٹوڈنٹ لون میں ہوتا ہے۔
واضع رہے وسیع پیمانے پر یہ بات تسلیم کی جارہی ہے کہ کورونا وائرس کی وبا سے بچائو میں کمپنیوں کی مدد کے لئے ترتیب دی گئی حکومتی سکیم کے تحت اب تک وصول کئے گئے 46 بلین پونڈز کے قرضوں کی ادائیگی میں متعدد فرموں کو جدوجہد کا سامنا ہے۔

50% LikesVS
50% Dislikes