حسین نواز کا براڈشیٹ کمیشن کیلئے جسٹس ریٹائیرڈ عظمت سعید کی تعیناتی پر تحفظات کا اظہار – Kashmir Link London

حسین نواز کا براڈشیٹ کمیشن کیلئے جسٹس ریٹائیرڈ عظمت سعید کی تعیناتی پر تحفظات کا اظہار

لندن (اکرم عابد) پاکستان میں نئے سامنے آنے والے اسکینڈل براڈ شیٹ سے متعلق بننے والے یک رکنی کمیشن بارے اپنے تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے سابق وزیراعظم نواز شریف کے صاحبزادے حسین نواز شریف نے کہا ہے کہ جسٹس ’ر ‘ عظمت سعید شیخ انتہائی متنازع شخص ہیں، اس لئے اس عہدے کیلئے ان کا انتخاب انتہائی نامناسب ہے۔

میڈیا کو جاری کردی ایک بیان میں انکا مزید کہنا تھا کہ براڈشیٹ کمیشن لوگوں کے سیاہ کرتوتوں پر سفیدی کرنے کا کام کرے گا۔ عظمت سعید نیب کا اس وقت بھی حصہ تھے جب جنرل (ر) مشرف نے اپنے آئین شکن اقدامات کو قانونی جواز فراہم کرنا تھا۔ وہ براڈشیٹ کے ساتھ ہونے والے مجرمانہ معاہدے کا بھی حصہ تھے اور دستخط کرنیوالوں میں شامل تھے حالانکہ بطور قانون دان انہیں اچھی طرح اندازہ تھا کہ اس بوگس اور مجرمانہ معاہدے کے کیا نقصانات ہوسکتے ہیں۔

حسین نواز نے کہا کہ عظمت سعید نے سیاستدانوں اور شریف فیملی کے خلاف کیسز بنائے اور ستم ظریفی یہ ہے کہ پنامہ کیس کے بنچ سمیت دیگر کیسوں کا فیصلہ کرنے میں بھی شامل رہے۔ طیارہ سازش کیس میں اے ٹی سی سندھ میں جو جرمانہ نواز شریف پر عائد کیا گیا اسے لاہور ہائی کورٹ اور سپریم کورٹ نے واپس کردیا تھا لیکن انہوں نے اسے بھی وصول کیا تھا حالانکہ نیب میں ہونے کے سبب ان کا کچھ لینا دینا نہیں تھا۔
انہوں نے دعویٰ کیا کہ واٹس ایپ، جے آئی ٹی کے پیچھے بھی عظمت شیخ تھے اور جب معاملات سامنے آگئے کہ کس طرح من پسند افسران کو لگوایا گیا تو انہوں نے اٹارنی جنرل آف پاکستان کو باقاعدہ دھمکی دی تھی کہ آپ شرافت سے مقدمہ لڑنا چاہتے ہیں یا ہم سے لڑائی چاہتے ہیں۔

حسین نواز کا کہنا تھا کہ انہوں نے بھری عدالت میں نواز شریف کو سسلین مافیا کہا اور وہ عدالت میں میاں نواز شریف کے متعلق کہہ چکے ہیں کہ آپ کو پتا ہونا چاہئے کہ وزیراعظم صاحب کیلئے اڈیالہ جیل میں بہت جگہ ہے، جبکہ ریٹائرمنٹ کے بعد موصوف شوکت خانم ہاسپٹل کے بورڈز آف گورنرز میں بیٹھ گئے۔

50% LikesVS
50% Dislikes