معاشرتی تلخیوں سے بھرپور فلم زندگی تماشہ کو نمائش کی اجازت – Kashmir Link London

معاشرتی تلخیوں سے بھرپور فلم زندگی تماشہ کو نمائش کی اجازت

لندن (شوبز ڈیسک) پاکستانی فلم زندگی تماشہ کو روائتی انسانی رویئے سے جنگ کے بعد بالآخر نمائش کی اجازت مل گئی۔
پاکستان کے ایوان بالا یعنی سینیٹ نے سینسر بورڈ کو فلم زندگی تماشا کو کرونا وائرس کے خاتمے اور حالات معمول پر آنے کے بعد ریلیز کرنے کی اجازت دے دی ہے۔
اس سال کے آغاز میں صوبہ سندھ کے سینسر بورڈ نے پاکستانی فلمساز اور اداکار سرمد کھوسٹ کی فلم ’زندگی تماشا‘ کی ریلیز یہ کہہ کر روک دی تھی کہ اس سے معاشرے کے مذہبی حلقوں میں بے چینی پیدا ہوگی اور ملک میں امن و امان کی صورت حال بگڑ سکتی ہے۔
تاہم آج پاکستان پیپلز پارٹی کے سینیٹر مصطفیٰ نواز کھوکھر نے ایک ٹویٹ میں کہا کہ سینیٹ کی کمیٹی برائے انسانی حقوق نے اس فلم کی ریلیز کی اجازت دے دی ہے۔


اپنی ٹویٹ میں انکا کہنا ہے کہ ہمیں اس فلم میں کچھ غلط نہیں لگا۔ سینسر بورڈ کو ہماری طرف سے کرونا کے بعد اس فلم کو ریلیز کرنے کی اجازت ہے۔
معاملے کو نبٹانے کیلئے سینسر بورڈ نے اس فلم کا جائزہ لینے کے لیے اسلامی نظریاتی کونسل سے رجوع کرنے کا فیصلہ بھی کیا تھا۔
اسی دوران ریلیز سے قبل ہی اس فلم نے ایشیا کے سب سے معتبر بشان فلم فیسٹیول میں کم جے سُک ایوارڈ بھی حاصل کرلیا۔
فلمساز سرمد کھوسٹ نے بھی شکائت کی تھی کہ ان کی فلم ’زندگی تماشا‘ کو رکوانے کے لیے انہیں درجنوں دھمکی آمیز فون کالز اور پیغامات موصول ہو رہے ہیں۔


انہوں نے پاکستانی عوام کے نام ایک خط لکھ کر بھی وضاحت کی تھی کہ انکا مقصد کسی کی دل آزاری نہیں بلکہ کچھ تلخ حقائق کی نشاندہی کرنا، اپنے خط میں انہوں نے لکھا کہ اس فلم کی کہانی صرف ایک اچھے مسلمان کی ہے، میں نے اس میں کسی فرقے اور پارٹی نام نہیں لیا بلکہ یہ فلم ایک اچھے مولوی کے حوالے سے ہے۔
فلم ’زندگی تماشا‘ رواں برس 24 جنوری کو ریلیز کی جانی تھی لیکن فلم کی ریلیز تینوں سینسر بورڈز سے منظوری کے باوجود بھی روک دی گئی تھی۔

فلم زندگی تماشہ کا ٹریلر
50% LikesVS
50% Dislikes