انٹرنیشنل بزنس پروفیشنل کارپوریشن کے زیراہتمام دوسرے آزادی کپ کرکٹ ٹورنامنٹ کا شاندار انعقاد – Kashmir Link London

انٹرنیشنل بزنس پروفیشنل کارپوریشن کے زیراہتمام دوسرے آزادی کپ کرکٹ ٹورنامنٹ کا شاندار انعقاد

لندن (مسرت اقبال) انٹرنیشنل بزنس پروفیشنل کاپوریشن کے زیراہتمام دوسرے آزادی کپ کرکٹ ٹورنامنٹ کا انعقاد کیا گیا جس میں لندن اور گرد و نواح کی بہترین پاکستانی ٹیموں نے حصہ لیا۔ جنہیں کارپوریشن کے چیئر مین رضوان سلہریا، میچز ایونٹ کے آرگنائیزر عامر خان، عاصم یوسف اور ثمرین چوہدری نے اپنی بہترین حکمت عملی سے انٹرٹین کیا۔

مشرقی لندن میں ہونے والی اس تقریب کو آزادی میلے کا نام دیا گیا تھا جس میں عوام کیلئے شرکت عام تھی۔ میچز کے بعد ہونے والی تقسیم انعامات کی تقریب میں میئر آف ایلنگ منیر احمد، میئر آف ریڈ برج رائے ایمت، میئر آف لیوشم توصیف انور، ڈپٹی میئر ہنسلو کونسل حنا میر، سابق میئر لیاقت علی، سابق میئر کونسلر عبدالغفور عزیز، وزیر اعظم پاکستان کے مشیر اوورسیز صاحبزادہ جہانگیر، پاکستان ہائی کمیشن سے ٹریڈ منسٹر شفیق شہزاد اور معروف کمیونٹی رہنمائوں مشتاق لاشاری، رومی ملک، شیخ سربلند، چیمبر آف کامرس کے صدر امجد خان، انٹرنیشنل لائیرز فیڈریشن کے مرکزی صدر بیرسٹر راشد سمیت درجنوں شخصیات نے شرکت کی اور میچز سے لطف اندوز ہوئے۔


دوسرے آزادی ٹورنامنٹ میں حصہ لینے والی ٹیموں میں پاکستان تحریک انصاف برطانیہ، گی سٹون، انٹرنیشنل لائیرز کونسل یوکے، انٹرنیشنل لائیرز ایسوسی ایشن، لندن میڈیا کلب، لندن میڈیا ستارز، ٹیک وارئیرز، مائیٹی الیون، پاکستان ہائی کمیشن، یو ایل ایس، پاکستان پیپلز پارٹی برطانیہ، ٹک ٹاک ستارز یوکے، پاکستان مسلم لیگ ن برطانیہ، پاکستان کمیونٹی سنٹر، فاطمہ شفیع چیریٹی اور یوکے پاکستان چیمبر آف کامرس شامل تھے جنہیں چار چار کے گروپ بنا کر تقسیم کیا گیا تھا۔

وقت کی کمی اور میچز زیادہ ہونے کے باعث پہلے تو اوورز کی تعداد دس سے آٹھ اور پھر فائینلز میں چھ اور چار تک محدود کرنا پڑی۔ لندن میڈیا کرکٹ کلب اور میڈیا سٹارز کے درمیان ٹورنامنٹ کا دلچسپ میچ کھیلا گیا جسے شائقین نے بے حد پسند کیا۔دلچسپ میچ دونوں ٹیموں کا سکور برابر ہونے پر ٹائی کر قرار دے دیا گیا۔اور میچ کا فیصلہ ٹاس کے زریعے کیا گیا۔ جو کہ نہیں ہونا چاہئے تھا۔رولز کے مطابق سپر اوور ہونا چاہیے تھا مگر انتظامیہ نے ٹائم کم اور اندھیرہ زیادہ ہونے کی وجہ ٹاس کیا ۔۔جس پر صحافیوں کی ٹیم لندن میڈیا کرکٹ کلب نے اپنا احتجاج ریکارڈ کرا یا اور گرائونڈ سے باہر چلے گئے۔

ٹورنامنٹ کے اختتام پر تقسیم انعامات کی تقریب ہوئی جس میں انتظامیہ سمیت ٹورنامنٹ کو کامیاب بنانی والی ہر شخصیت کو انعام سے نوازا گیا۔

50% LikesVS
50% Dislikes