انگلینڈ کی طرف سے پاکستان کا دورہ کرکٹ منسوخ کرنے پر انگلش کھلاڑیوں اور صحافیوں کا سخت ردعمل – Kashmir Link London

انگلینڈ کی طرف سے پاکستان کا دورہ کرکٹ منسوخ کرنے پر انگلش کھلاڑیوں اور صحافیوں کا سخت ردعمل

لندن (مسرت اقبال) نیوزی لینڈ اور بعد ازاں انگلینڈ کی طرف سے پاکستان کے دورے کی منسوخی متعدد انگلش کھلاڑیوں اور صحافیوں نے اسے پاکستان کیساتھ زیادتی سے تعبیر کیا ہے۔ برطانوی اخبار میں لکھے اپنے ایک آرٹیکل میں سابق انگلش کپتان مائیک ایتھرٹن نے کہا کہ انگلینڈ بورڈ پاکستان کا قرض چکانے میں ناکام رہا ہے۔ اس سے قبل مائیکل وان بھی کھل کر کہہ چکے ہیں کہ انگلینڈ نے سیریز سے انکار کرکے پاکستان کیساتھ زیادتی کی، انکا کہنا تھا کہ انگلینڈ کو پاکستان کیساتھ ہر حال میں کھیلنا چاہیئے تھا چاہے یہ سیریز باہمی رضامندی سے متحدہ عرب امارات میں ہی منعقد ہوتی۔

مائیک ایتھرٹن کا کہنا ہے کہ انگلشن بورڈ اور کھلاڑیوں کے پاس اس ہفتے چیزوں کو ٹھیک کرنے کا موقع تھا مگر انہوں نے اسے گنوادیا۔آسڑیلیا سے چیزوں کو ٹھیک کرنے کی اتنی ہی امید ہے جتنی کہ انگلینڈ سے تھی۔دورے کی منسوخی سے واضح پتہ چل رہا کہ اس کی وجہ سیکیورٹی تھریٹ نہیں ہے۔انگلش سیکیورٹی ٹیم کی جانب سے دورے کے حوالے سے کوئی نئی بات سامنے نہیں آئی ہے۔اگر کوئی سیکیورٹی کا مسئلہ تھا تو انگلینڈ بورڈ کا اس کا بتانا چاہیے تھا۔پاکستان کے دوروں کی منسوخی کی وجہ سے شدید مالی نقصان ہوا انکا غصہ جائز ہے۔

معروف برطانوی صحافی پیٹر اوبورن کا کہنا تھا کہ لگتا ہے کہ دورے کو سیکیورٹی وجوہات کی وجہ سے منسوخ نہیں کیا گیا،برطانوی ٹیم کو وہی سیکیورٹی فراہم کی جانی تھی جو کہ برطانوی شہزادے کو کچھ روز قبل پاکستان کے دورے کے دوران فراہم کی گئی تھی۔ برطانوی ہائی کمیشنر آفس بھی سیکیورٹی سے مطمئن تھا۔پاکستان کے بغیر کرکٹ کا کھیل مکمل نہیں ہے۔ پاکستان نے کورونا کے شدید خطرات کے باوجود انگلینڈ کا دورہ کیا اور برطانیہ کی مدد کی اور اس کے بدلے میں برطانوی بورڈ نے بہت غلط کیا۔یہ صرف پاکستان کرکٹ نہیں بلکہ انٹرنیشنل کرکٹ کے لیے ایک دھچکا ہے۔

50% LikesVS
50% Dislikes