شہباز شریف سے برطانوی نیشنل کرائم ایجنسی کی تحقیقات کی دلچسپ تفصیلات منظرعام پر – Kashmir Link London

شہباز شریف سے برطانوی نیشنل کرائم ایجنسی کی تحقیقات کی دلچسپ تفصیلات منظرعام پر

لندن(کشمیر لنک نیوز) اپوزیشن جماعت مسلم لیگ (ن) کے صدر اور اپوزیشن لیڈر شہباز شریف سے برطانیہ کی نیشنل کرائم ایجنسی (این سی اے) کی تفتیش کی مزید تفصیل سامنے آگئی جو ناصرف دلچسپ ہیں بلکہ حیران کن بھی ہیں۔

ایجنسی نے سینٹرل لندن میں فلیٹ کی خریداری کے لیے استعمال کیے گئے پیسے کی منی ٹریل خود شہباز شریف سے حاصل کی۔مئی 2005 میں خریدے گئے فلیٹ کے لیے شہباز شریف کو تقریباً 60 ہزار پاؤنڈز کا قرض برٹش پاکستانی بزنس مین انیل مسرت نے فراہم کیا، جی ہاں یہ وہی انیل مسرت ہیں جو آجکل وزیر اعظم عمران خان کے بھی دوست ہیں۔

نیشنل کرائم ایجنسی نے سلیمان شہباز کے بارکلے اکاؤنٹ میں گفٹ کے طور پر نقد رقوم کی منتقلی کی تمام تفصیلات بھی طلب کیں۔شہباز شریف کے وکلا کو رقوم کی ادائیگی کرنے پر این سی اے نے بزنس مین ذوالفقار احمد کا اکاؤنٹ بھی منجمد کیا۔ این سی اے نے عدالت میں پیش کی گئی یکطرفہ درخواست میں کہا کہ اُسے سلیمان شہباز کے خلاف 2 سال پر محیط بین الاقوامی تفتیش میں منی لانڈرنگ اور مجرمانہ طرزِ عمل کے کوئی شواہد نہیں ملے۔

برطانیہ کی این سی اے نے شہباز شریف کی جانب سے سینٹرل لندن میں فلیٹ کی خریداری کی تفتیش کی تھی۔نیشنل کرائم ایجنسی کے بین الاقوامی کرپشن یونٹ نے شہباز شریف سے فلیٹ سے متعلق منی ٹریل کی مکمل تفصیلات طلب کی تھیں جو فراہم کی گئیں جبکہ مشیر احتساب شہزاد اکبر کی جانب سے سوشل میڈیا پر پیش کئے جانے والی دستاویزات ڈراصل اس ویسٹ منسٹر مجسٹریٹ کورٹ کی ہے جس نے نیشنل کرائم ایجنسی کے کہنے پر منجمد اثاثے وا گزار کرنے کے آرڈر کئے۔ نیشنل کرائم ایجنسی کی رپورٹ کسی حکومتی رہدیدار نے شیئر نہیں کی جس میں سب تفصیل موجود ہے۔

50% LikesVS
50% Dislikes