مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیاں قابل مذمت ہیں؛ چوہدری رحمٰن نصیر آف مرالہ – Kashmir Link London

مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیاں قابل مذمت ہیں؛ چوہدری رحمٰن نصیر آف مرالہ

مانچسٹر (کشمیر لنک نیوز) آرمڈ فورسز اسپیشل پاور ایکٹ کے ذریعے غیر معمولی اختیارات والی فوج کے محاصرے میں وادی کشمیر ایک کھلی جیل بنی ہوئی ہے۔ ہندوستانی فوج کے باقاعدہ محاصرے اور سرچ آپریشن ، نوجوانوں کو نظربند کرنے اور ان پر تشدد کرنے، رہائشی املاک کو دھماکے سے اڑانے، شہریوں کو زخمی کرنے اور ہلاک کرنے اور مردوں اور خواتین اور بچوں پر حملہ کرنا کشمیر میں معمول بن چکا ہے۔ ان خیالات کا اظہار مقررین نے چوہدری ریاست خان اور چوہدری مہدی خان کی جانب سے سابق ایم این اے مسلم لیگ (ق) چوہدری رحمٰن نصیر آف مرالہ اورچیئرمین بلدیہ ڈنگہ ضلع گجرات میاں محمد اسلم کے اعزاز میں عشائیہ تقریب میں کیا۔

تقریب میں کونسلر میاں مظہر اقبال،قاضی محمد امیر،آصف خان،چوہدری رضوان نصیر مرالہ،میاں عبدالجبار ناروے،زوہیب خان،غلام مصطفی مغل و دیگر نے شرکت کی، اس موقع پرچیئرمین میاں محمد اسلم نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ بھارت مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیاں کر رہا ہے ۔ کشمیر میں انسانی حقوق مکمل معطل ہیں ۔ بھارت نے کشمیریوں کی آزادی سلب کر رکھی ہے ۔ کشمیریوں نے جان کے نذرانے تو پیش کیے لیکن اپنے اصولی موقف حق خود ارادیت کے حصول پر سمجھوتا نہیں کیا۔ مودی نے سمجھا کہ 5اگست کا اقدام اٹھا کر حریت و آزادی کی آواز کو کچل دے گا لیکن کشمیریوں نے ثابت کیا کہ کوئی بھی کشمیریوں کے جذبے اور سر کو کچل نہیں سکتا۔

چوہدری رحمٰن نصیر آف مرالہ نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ دو سال قبل 5 اگست 2019 کو بی جے پی حکومت نے یکطرفہ طور پر آرٹیکل 370 اور 35 اے کو منسوخ کردیا، جس نے ہندوستانی آئین کے اندر جموں و کشمیر کو خصوصی حیثیت دی ہوئی تھی۔ ریاست میں مکمل طور پر لاک ڈاؤن لگا کر، ٹیلیفون اور انٹرنیٹ سمیت تمام بیرونی مواصلات کے نظام کو کاٹ کر اور کرفیو نافذ کردیا گیا۔ اس دوران، شبیر شاہ ، یاسین ملک، آسیہ اندرابی سمیت ہزاروں سیاسی کارکنوں اور رہنماؤں کو بے بنیاد الزامات کے تحت حراست میں لیا گیا ہے۔ انہیں فوری رہا کیا جائے۔

50% LikesVS
50% Dislikes