کورونا کے باعث طلبا کو گھر پر تعلیم کیلئے لیپ ٹاپ دینے کا اعلان – Kashmir Link London

کورونا کے باعث طلبا کو گھر پر تعلیم کیلئے لیپ ٹاپ دینے کا اعلان

لندن(کشمیر لنک رپورٹ)کورونا وائرسCOVID 19کی وبا کے دوران انگلینڈ میں سکول بند ہونے کے باعث مستحق طلبا کو گھر پر تعلیمی سلسلہ جاری رکھنے میں مدد کیلئے لیپ ٹاپ مستعار دیئے جائیں گے،محکمہ تعلیم بھی پرائمری اور سیکنڈری کے شاگردوں کیلئے فری آن لائن تعلیم کو سپورٹ کر رہا ہے،15سال کے ان مستحق نوجوانوں کو لیپ ٹاپ یا ٹیبلٹ فراہم کئے جائیں گے جو کمپیوٹر تک رسائی نہیں رکھتے۔وزیر تعلیم گیون ولیمنسن نے کہا ہے کہ حکومت کے اس فیصلے سے گھر پر تعلیم حاصل کرنے والے بچوں کے پیرنٹس پر دبائو کا خاتمہ ہو گا،مسٹر ولیمسن کا کہنا تھا کہ سائنٹیفک ایڈوائس میں تبدیلی تک سکول بدستو بند رہیں گے،پیرنٹس کو اپنے کلاس رومز چلانے میں مدد کیلئےحکومت10ویں کلاس تک کی تعلیم حاصل کرنے والے طالب علموں کیلئے180آن لائن اسباق فی ہفتہ کے تعلیمی سلسلہ کو فروغ دے رہی ہے،لیپ ٹاپ اور کمپیوٹر ڈیوائسز10ویں کلاس کے ایسے مستحق شاگردوں کو فراہم کئے جائیں گے جو اگلے سال جی سی ایس ایز کے امتحانات دیں گے،دستیاب لیپ ٹاپس کی تعداد نہیں دی گئی اور نہ ہی اس مقصد کیلئے مخصوص بجٹ مختص کیا گیا ہے بلکہ سکول اور لوکل اتھارٹیز یہ فیصلہ کریں گی کہ کمپیوٹر تک رسائی کی ضرورت کن شاگردوں کو ہے،یہ لیپ ٹاپس سوشل ورکر کے بچوں اور کیئر کیلئے چھٹیوں پر گئے شاگردوں کو بھی دستیاب ہوں گے جو کہ ریگولر کلاسز دوبارہ شروع ہونے پر انہیں واپس سکول لے آئیں گے،فیملیز کو انٹر نیٹ سے کنکشن کیلئے4جی روٹرز کی پیشکش بھی کی جائے گی،ٹیکنالوجی پر وعدوں سے اس تشویش کی عکاسی ہوتی ہے کہ سکول سے غیر حاضری کے دوران غریب فیملیز کے بچے غیر متناسب طور پر تعلیم سے دور رہیں گے،ایک اکیڈمی ٹرسٹ اے ای ٹی نے پہلے ہی9000لیپ ٹاپس اور ڈیوائسز خرید لی ہیں،تاکہ سکول میں مفت کھانے کا استحقاق رکھنے والے تمام شاگردوں میں تقسیم کئے جا سکیں،گھر سے تعلیمی سلسلہ جاری رکھنے والے شاگردوں کیلئے آن لائن اسباق ٹیچرز اینڈ ایجوکیشن آرگنائزیشنز بشمول سٹن ٹرسٹ اور ٹیچ فرسٹ نے تیار کئے ہیں جو کہ ایک اوک نیشنل اکیڈمی کے ٹائٹل سے دستیاب ہوں گے،بی بی سی بھی تعلیمی وسائل کا ایک سلسلہ آن لائن اور ٹی وی پر شروع کر رہا ہے،اے ایس سی ایل ٹیچرز یونین کے سربراہ جیوف بارٹن نے طالب علموں کا تعلیمی سلسلہ جاری رکھنے میں مدد کے اس اقدام کا خیر مقدم کیا ہے۔

50% LikesVS
50% Dislikes