ہمیں آج موسمیاتی تبدیلی کے اثرات کو کم کرنے کیلئے جرات مندانہ اقدامات کی ضرورت ہے،شیری رحمان

سٹاک ہوم (کشمیر لنک نیوز) وفاقی وزیر برائے موسمیاتی تبدیلی سینیٹر شیری رحمان کی سٹاک ہوم میں ہونے والی سویڈن اورکینیا کی مشترکہ میزبانی میں بین الاقوامی سٹاک ہوم +50 اجلاس میں شرکت۔وفاقی وزیر برائے موسمیاتی تبدیلی’’سب کی خوشحالی کے لیے ایک صحت مند سیارہ،ہماری ذمہ داری،ہمارا موقع‘‘کے موضوع کے تحت منعقدہ سٹاک ہوم +50 اجلاس میںشرکت کے لیے سویڈن میں میں موجود ہیں ۔ اجلاس میں پاکستان کی نمائندگی کرتے ہوئے وفاقی وزیر سینیٹر شیریں رحمان نے اسٹاک ہوم+50 میں G77 اور چین کی نمائندگی کرتے ہوئے کہا پاکستان موسمیاتی تبدیلیوں کی وجہ سے سب سے زیادہ متاثر ہونےوالے 10 ممالک میں سے ایک ہے۔ اس تقریب میں شریک 134 ممالک کے گروپ کی سربراہی کی۔ عام بحث میں 10 سے زائد سربراہان مملکت اور 130 شریک رکن ممالک کے 90 سے زائد وزراء کے علاوہ سول سوسائٹی اور نجی شعبے کے نمائندوں نے شرکت کی۔

وفاقی وزیر نے ترقی پذیر ممالک کے لیے حیاتیاتی تنوع کے نقصان اور جیواشم ایندھن کے اخراج اور ترقی یافتہ ممالک کی بشریاتی سرگرمیوں سے ہونے والے نقصان سے نمٹنے کے لیے آسان، طویل مدتی اور طویل المدتی موسمیاتی فنانسنگ کی ضرورت پر زور دیا۔ انہوں نے کہا ہمیں آج موسمیاتی تبدیلی کے اثرات کو کم کرنے کے لیے پرجوش اور جرات مندانہ اقدامات کی ضرورت ہے تاکہ ہمارے ماحول اور قدرتی وسائل کے تحفظ، تحفظ اور پائیدار استعمال کو یقینی بنایا جا سکے۔ COP26 کے نتیجے میں عالمی اوسط درجہ حرارت میں اضافے کو صنعتی سطح سے پہلے کی سطح سے 2C سے کم تک برقرار رکھنے کے طویل مدتی عالمی ہدف کو پورا کرنے کے لیے مثبت اہداف حاصل ہوئے اور درجہ حرارت میں اضافے کو صنعتی دور سے پہلے 1.5C تک محدود کرنے کی کوششوں کو آگے بڑھایا گیا۔ سطح ترقی یافتہ ممالک تاریخی طور پر زیادہ تر عالمی اخراج کے ذمہ دار رہے ہیں اور انہیں اپنے اخراج میں قطعی اور نمایاں کمی کرنی چاہیے۔وفاقی وزیر کا کہنا تھا کہ عالمی خالص صفر کی منتقلی میں، ترقی یافتہ ممالک کو آگے بڑھنا چاہیے اور یہ منتقلی ایکوئٹی کے اصولوں اور مشترکہ لیکن تفریق شدہ ذمہ داریوں اور متعلقہ صلاحیتوں پر مبنی ہونی چاہیے۔

ہم COP 26 میں گلاسگو میں ہونے والے معاہدے کا خیرمقدم کرتے ہیں تاکہ 2025 سے پہلے موسمیاتی فنانس کے نئے اجتماعی، مقداری ہدف کے لیے مزید بات چیت شروع کی جائے۔ وفاقی وزیر شیری رحمٰن نے 2022 سے آگے پائیدار کھپت اور پیداوار کے لیے عالمی حکمت عملی کے 10 سالہ فریم ورک آف پروگرامز آن سسٹین ایبل کنزمپشن اینڈ پروڈکشن پیٹرنز (10YFP) کے بورڈ کی جانب سے پیش رفت کا خیرمقدم کیا اور اقوام متحدہ کے نظام کے تمام اسٹیک ہولڈرز پر عمل درآمد کو مضبوط بنانے پر زور دیا۔انہوں نے SDG12 کے نفاذ اور پائیدار کھپت اور پیداوار کے لیے عالمی اور جامع مکالمے کو فروغ دینے کے لیے پہلے “ون پلانیٹ نیٹ ورک فورم” کے انعقاد کا بھی خیر مقدم کیا۔”ہمیں اقوام متحدہ کے ماحولیات پروگرام (UNEP) کے اندر جغرافیائی نمائندگی میں گہرے اور مستقل عدم توازن کو بھی دور کرنے کی ضرورت ہے۔ترقی یافتہ ممالک کی جانب سے نئے، اضافی، مناسب اور پیش قیاسی مالی،تکنیکی اور صلاحیت کی مدد کے بغیر ترقی پذیر ممالک 2030 کے ایجنڈا برائے پائیدار ترقی اور پیرس معاہدے کے ان اہداف کو حاصل کرنے سے قاصر ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں