کشمیری رہنما راجہ نجابت حسین کو ستارہ پاکستان ملنے پر ان کے اعزاز میں تقریب، خدمات پر خراج تحسین

اولڈھم(محمد فیاض بشیر) جموں کشمیر تحریک حق خود ارادیت انٹرنیشنل JKSDMIکے بانی چیئرمین راجہ نجابت حسین کے اعزاز میں برطانیہ کے شہر اولڈھم میں ایک پر قار تقریب کا انعقاد کیا گیا جس کی صدارت اظہر خان آف اولڈھم نے کی جب کہ نظامت کے فرائض نائلہ شریف نے ادا کئے۔ تقریب کے شرکت کرنے والے دیگر معززمہمانوں میں شیڈو منسٹر اینڈریوگوائن ایم پی چیئرمین لیبر فرینڈز آف کشمیر، شیڈو جسٹس منسٹر ڈاکٹر افضل خان ایم پی، مانچسٹر میں تعینات قونصل جنرل آف پاکستان طارق وزیر، سردار عبدالرحمان خان سرپرست JKSDMI، راجہ شوکت خالق ایڈووکیٹ سابق مشیر برائے وزیر اعظم آزادحکومت ریاست جموں و کشمیر، ڈاکٹر ثانیہ منیربھٹیJKSDMI Punjab، کونسلر نائلہ شریف چیئرپرسن JKSDMI نارتھ آف انگلینڈ، ہیری بوٹا ڈائریکٹر ایڈمنسٹریشن JKSDMI، ایگزیکٹو ممبران JKSDMI فرزانہ افضل، نغمانہ کنول شیخ، نورین شہزاد، حمیرا ثنا، جاوید طارق، تیمور شفیق، کونسلر محمد الیاس، کونسلر عقیل سلامت، حاجی محمد اسلم، ناظم حسین مغل، راجہ مہربان خان، مظفر خان، محمد نجیب اور مانچسٹر سے آئے معزز مہمان شامل تھے۔ جبکہ تقریب کا اہتمام یاسمین عالم، ثمینہ خان اور اظہر خان آف اولڈھم نے کیا تھا۔

تقریب میں شریک برطانوی ممبران پارلیمنٹ، صدر تقریب و دیگر اہم راہنماؤں نے اپنے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ راجہ نجابت حسین کی قیادت میں جموں کشمیر تحریک حق خود ارادیت انٹرنیشنل کے تمام عہدیداران برطانیہ، یورپ، پاکستان اور آزادجموں و کشمیر کے علاوہ دنیا کے مختلف ممالک کے میں اپنی سرگرمیاں روزانہ کی بنیاد پر جاری رکھے ہوئے ہیں۔ راہنماؤں کا کہنا تھا کہ راجہ نجابت حسین کو حکومت پاکستان کی جانب سے ستارہء پاکستان جیسے قومی اعزاز سے نوازا جانا ہم سب کے لئے انتہائی قابل فخر ہے اور ہم حکومت پاکستان کے انتہائی مشکور ہیں جنہوں نے راجہ نجابت حسین اور ان کی ٹیم کی خدمات کو سراہتے ہوئے راجہ نجابت حسین کو اس قومی سول ایوارڈ سے نوازا۔ مقررین کا کہنا تھا کہ ہم جموں کشمیر تحریک حق خود ارادیت انٹرنیشنل کے تمام عہدیداران کے ساتھ اپنا بھرپور عملی تعاون جاری رکھیں گے اور راجہ نجابت حسین کی جانب سے اعلان کردہ اگلے تین ماہ کی سرگرمیوں کو کامیاب بنانے کے لئے اپنی اپنی سطح پر کردار ادا کرتے رہیں گے۔

راجہ نجابت حسین نے اپنے خطاب میں کہا کہ بھارت جس خطرناک طریقے سے مقبوضہ کشمیر میں ظلم و ستم جاری رکھے ہوئے ہے اس کی مثال پوری دنیا میں کہیں بھی نہیں ملتی۔ بھارت مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی انتہائی سنگین اور ناقابل معافی اور ناقابل تلافی خلاف ورزیاں جاری رکھے ہوئے ہیں۔ کشمیریوں کو آج تک اقوام متحدہ کی تسلیم شدہ قراردادوں کے مطابق حق خود ارادیت نہیں مل سکا۔ مقبوضہ کشمیر کے عوام تن تنہا اپنی جد و جہد آزادی کو انسانی جانوں کی قربانیاں دے کر زندہ رکھے ہوئے ہیں۔ بھارتی وزیر داخلہ امیت انیل چندرہ شاہ(امیت شاہ) کے دورہ مقبوضہ کشمیر پر کشمیری عوام نے نہ صرف مقبوضہ کشمیر بلکہ پاکستان، آزادجموں و کشمیر اور پوری دنیا میں شدید احتجاج کر کے عالمی برادری کے ضمیر کو جگایا ہے اور عالمی برادری سے مطالبہ کیا ہے مقبوضہ کشمیر میں بھارتی حکومت اور بھارتی افواج کی جانب سے ظلم و ستم کا خاتمہ کروایا جائے اور مقبوضہ کشمیر کے عوام کو بھارتی تسلط سے آزادی دلوائی جائے۔

راجہ نجابت حسین کا کہنا تھا کہ ہم آزادی کے بیس کیمپ آزادجموں و کشمیرمیں، پاکستان میں اور دنیا کے بیشتر ممالک میں اور خاص طور پر برطانیہ میں رہتے ہوئے مسئلہ کشمیر کو نہ صرف ہر سطح پر اُجاگر کرتے چلے آ رہے ہیں بلکہ مسئلہ کشمیر کے پر امن حل کے لئے برطانوی ممبران پارلیمنٹ، یورپی ممبران پارلیمنٹ، کمیونٹی راہنماؤں، عالمی اثر و رسوخ رکھنے والے ممالک کے راہنماؤں کے ساتھ مل کر لابی کرتے چلے آ رہے ہیں اور پوری دنیا ہماری پر امن جد و جہد کی معترف ہے۔ راجہ نجابت حسین نے کہا کہ حکومت آزادجموں و کشمیر، حکومت پاکستان ہر قسم کے سیاسی نظریات، اختلافات، تنازعات سے بالا تر ہو کر صرف و صرف مقبوضہ کشمیر کی آواز پوری دنیا میں بلند کریں اور مسئلہ کشمیر کو سیاست کی نظر نہ کیا جائے۔ مسئلہ کشمیر عالمی سطح پر تسلیم شدہ تنازعہ ہے جسے اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق تسلیم کیا جا چکا ہے اور اقوام متحدہ نے کشمیریوں کو ان کا حق خود ارادیت دلوانے کا وعدہ بھی کر ر کھا ہے مگر بھارت کی ہٹ دھرمی کی وجہ سے تاحال کشمیری قوم سات دہائیوں سے زیادہ عرصہ سے بھارت حکومت اور بھارتی افواج کے ظلم و ستم سہتی چلی آ رہی ہے اور مقبوضہ کشمیر کے عوام نے آج تک اپنی لاکھوں جانوں کی قربانیاں دے کر بھی تحریک آزادی کشمیر کو زندہ رکھا ہوا ہے۔

راجہ نجابت حسین نے حکومت پاکستان کے مسئلہ کشمیر پر جاندار موقف کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ حکومت پاکستان نے ہمیشہ سے ہی کشمیری قوم کی اخلاقی، سفارتی، سیاسی و دیگر امداد جاری رکھی ہوئی ہے اور حکومت آزادجموں و کشمیر کو سالانہ بنیادوں پر بجٹ فراہم کیا جا رہا ہے اور آزادحکومت ریاست جموں وکشمیر کی حیثیت کو تسلیم کر رکھا ہے اور حکومت آزادجموں و کشمیر کو اپنا صدر اور اپنا وزیر اعظم منتخب کرنے کا مکمل اختیار دے رکھا ہے اور یہ سلسلہ تاحال جاری و ساری ہے۔ راجہ نجابت حسین نے کہا کہ انہوں نے دنیا کے بیشتر ممالک کے دورے کئے اور مختلف کشمیری وفود سے ملاقاتیں کیں اور تمام کشمیریوں کی یہی رائے ہے کہ وہ سب پاکستانی ہیں اور ہر صورت میں پاکستان کے ساتھ رہنا چاہتے ہیں اور مقبوضہ کشمیر کو بھارتی تسلط سے آزادی دلوا کر تکمیل پاکستان کرنا چاہتے ہیں اور پاکستان کا حصہ ہیں اور حصہ رہیں گے۔ دنیا کی کوئی طاقت کشمیریوں کو پاکستان سے الگ نہیں کر سکتی۔ راجہ نجابت حسین نے اپنے اعزاز میں انتہائی پرو قار تقریب منعقد کرنے والے تمام خواتین و حضرات کا بھرپور شکریہ ادا کیا اوراس تقریب میں شرکت کرنے والے تمام معزز مہمانان گرامی کا بھی دل کی اتھاہ گہرائیوں سے شکریہ ادا کیا اور کہا کہ آج کی تقریب سے جموں کشمیر تحریک حق خود ارادیت انٹرنیشنل کے تمام عہدیداران کو حوصلے مذید بلند ہوئے ہیں اور ہم اسی ماہ اکتوبر میں ہی برطانوی پارلیمنٹ میں بہت جلد میٹنگز بھی منعقد کرنے جا رہے ہیں۔ راجہ نجابت حسین نے کہا کہ وہ تمام برطانوی ممبران پارلیمنٹ سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ برطانوی پارلیمنٹ میں مسئلہ کشمیر کی سنگینی کو اُجاگر کریں، مقبوضہ کشمیر میں جاری بھارتی مظالم کو تسلسل کے ساتھ اُجاگر کریں اور حکومت برطانیہ سے اپیل کریں کہ مسئلہ کشمیر کے فوری اور پائیدار حل کے لئے برطانوی حکومت اپنا عالمی اثر و رسوخ استعمال کرے اور 2022 میں ہی مسئلہ کشمیر کو کشمیریوں کی خواہشات اور اقوام متحدہ کی تسلیم شدہ قراردادوں کے مطابق حل کروالیا جائے کیوں کہ مسئلہ کشمیر جتنا طویل ہوتا چلا جا رہا ہے اس سے نہ صرف جنوبی ایشیاء کا امن خطرے میں پڑ چکا ہے بلکہ پوری دنیا کے امن کو خطرات لاحق ہو چکے ہیں۔