فرانس ایمبیسی لندن کے باہر نماز کی ادائیگی اور گستاخانہ خاکوں کے خلاف احتجاجی مظاہرہ – Kashmir Link London

فرانس ایمبیسی لندن کے باہر نماز کی ادائیگی اور گستاخانہ خاکوں کے خلاف احتجاجی مظاہرہ

لندن (اکرم عابد) فرانس میں گستاخانہ خاکوں کا ایشو دوبارہ زندہ کرنے اور فرانسیسی صدر کے اسلاموفوبیا بارے بیان بازی پر برطانوی مسلمانوں کی کثیر تعداد نے لندن میں فرانسیسی ایمبیسی کے باہر احتجاجی مظاہرہ کیا۔

اس موقع پر ایمبیسی کے باہر نماز جمعہ بھی ادا کی گئی اور دنیا کو باور کرایا گیا کہ اسلام امن و محبت کا مذہب ہے جو کسی بھی مذہبی شخصیت کی حرمت کا درس دیتا ہے۔
مقررین کا کہنا تھا کہ کوئی مسلمان اپنے نبی کی شان میں گستاخی برداشت نہیں کرسکتا، فرانس کے صدر میکرون نے مسلمانوں کے جذبات سے کھیلنے کی کوشش کی ہے حالانکہ انہیں ایشو کی سنگینی کو جانتے ہوئے غلط حرکات کے مرتکب افراد کی سرزنش کرنی چاہیئے تھی۔

مظاہرین کا کہنا تھا کہ آزادی اظہار کا یہ قطعی مطلب نہیں کہ دیگر مذاہب کی مقدس ہستیوں کو نشانہ بنایا جائے، انکا کہنا تھا کہ مسلمان دیگر مذاہب کا احترام کرتے ہیں اور دوسروں سے بھی یہی توقع رکھتے ہیں۔
اس موقع پر احتجاجی مظاہرے کے شرکا نے غلام ہیں غلام ہیں رسول کے غلام ہیں، نعرہ تکبیر اور نعرہ رسالت کے فلک شگاف نعرے بھی بلند کیئے جس سے ارد گرد کا علاقہ گونج اٹھا۔


بائیکاٹ بائیکاٹ کے نعروں کے دوران بطور احتجاج فرانسیسی پرفیوم بھی ضائع کیا گیا۔ اس موقع پر پولیس کی بھاری نفری فرانس کی ایمبیسی کے باہر موجود رہی اور شرکا مظاہرہ کو کسی بھی غیر قانونی حرکت سے روکتی رہی۔ مظاہرے کے بعد شرکا پرامن طور پر منتشر ہوگئے۔

50% LikesVS
50% Dislikes