برطانوی دارالحکومت لندن میں کورونا کی جعلی ادویات کی فروخت کا انکشاف، بھارتی کمپنی بے نقاب – Kashmir Link London

برطانوی دارالحکومت لندن میں کورونا کی جعلی ادویات کی فروخت کا انکشاف، بھارتی کمپنی بے نقاب

لندن (عمران راجہ) جھوٹ فریب اور دھوکہ دہی کچھ لوگوں کی فطرت میں ایسے رچ بس گئی ہوتی ہیں کہ وہ دنیا کے کسی کونے، کسی معاشرے میں بھی ہوں اسکی مشق سے باز نہیں آتے۔ آجکل دنیا کورونا وبا کی بری طرح سے لپیٹ میں ہے جسکا فائدہ اٹھاتے ہوئے اسکی جعلی دوائیاں لیکر مارکیٹ میں آموجود ہوئے ہیں۔
معاشی طور پر دنیا کا مستحکم ترین شہر لندن بھی کورونا کی ان جعلی دوائیوں کی لپیٹ میں آچکا ہے۔ مقامی میڈیا رپورٹس کے مطابق لندن کے بیشتر ایشیائی علاقوں کی دکانوں کے کاؤنٹر پر انڈیا سے درآمد کی جانے والی، جڑی بوٹیوں سے تیار کی گئی ایک دوائی کرونیل فروخت ہوتی دیکھی گئی۔

دوا میں کورونا سے بچاؤ کا دعویٰ برطانوی اشتہاری قوانین کے خلاف ہے۔برطانوی نشریاتی ادارے کی تحقیقاتی رپورٹ کے مطابق لندن کے ان علاقوں، جہاں ایشیائی ممالک کے شہریوں کی تعداد زیادہ ہے، میڈیکل اسٹورز میں بھارت کی آیورویدک دوائی کو یہ کہہ کر فروخت کیا جارہا ہے کہ یہ کورونا کیخلاف مدافعتی نظام کو مضبوط کرتا ہے۔

یہ دوا بھارتی یوگا گورو بابا رام دیو کی آیورویدک دوائیں بنانے والی کمپنی پتانجلی آیوروید کی جانب سے تیار کی گئی ہے۔ تحقیقات میں معلوم ہوا کہ دوائی کورونا وائرس سے بچانے میں بالکل بھی معاون نہیں۔
بی بی سی کے لیے ان ادوایات کے ٹیسٹ برمنگھم یونیورسٹی کی لیبارٹری میں کیے گئے۔ ٹیسٹوں کے دروان ظاہر ہوا کہ ان گولیوں میں پودوں پر مبنی اجزا موجود ہیں جو کووڈ 19 کے خلاف کوئی تحفظ فراہم نہیں کرسکتے ہیں۔

برطانیہ کے اشتہاراتی قوانین میں کووڈ 19 اور ‘قوتِ مدافعت بڑھانے‘ کے حوالے دینے پر پابندی عائد ہے جبکہ یہ دوائیاں اسی بنیاد پر بیچی جارہی ہیں۔
برطانوی میڈیسن اینڈ ہیلتھ کیئر پروڈکٹس ریگولیٹری ایجنسی (ایم ایچ آر اے) کا اس حوالے سے کہنا ہے کہ برطانیہ کی کسی بھی مارکیٹ میں اگر غیر مجاز دواؤں کو فروخت کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے تو ان کے خلاف مناسب ایکشن لیا جائے گا۔

50% LikesVS
50% Dislikes