مذہب، عقیدہ یا روایات، آپ کسی پر کچھ مسلط نہیں کرسکتے، یہ ذاتی انتخاب ہیں؛ اے آر رحمان – Kashmir Link London

مذہب، عقیدہ یا روایات، آپ کسی پر کچھ مسلط نہیں کرسکتے، یہ ذاتی انتخاب ہیں؛ اے آر رحمان

لندن (مونا بیگ) آسکر ایوارڈ یافتہ بھارت کے معروف موسیقار اے آر رحمان نے کہا ہے کہ مجھے اس وقت بہت عجیب لگتا ہے جب لوگ یہ پوچھتے ہیں کہ مسلمان ہوجانے سے کیا وہ بھی کامیاب ہوسکتے ہیں، عام طور پر تو میرا جواب خاموشی ہی ہوتا ہے لیکن جب بھی مجھے موقع ملا میں نے وضاحت کی ہے کہ اس بات کا اسلام قبول کرنے سے کوئی تعلق نہیں ہے یہ اس نقطے کے بارے میں ہے جو کسی بھی وقت آپ کو مل سکتا ہے۔ ہمارے روحانی اساتذہ ، صوفی لوگ اور میری والدہ نے ہمیں کچھ ایسی چیزیں سکھائیں ہیں جو بہت خاص ہیں جو ہر عقیدے میں ہوتی ہیں جس کا ہم انتخاب کرتے ہیں۔

ان جذبات کا اظہار انہوں نے بھارت کے معروف اخبار ہندوستان ٹائمز کو خصوصی انٹرویو دیتے ہوئے کیا۔ اخبار کے مطابق اے آر رحمان کا نام دلیپ کمار تھا ،لیکن اپنے والد میوزک کمپوزر آر کے شھیکر کی وفات کے بعد اپنے پہلے پروجیکٹ ’روزا‘ کی ریلیز سے کچھ عرصہ قبل انہوں نے اہل خانہ سمیت اسلام قبول کر لیا تھا۔

اخبار کے مطابق اے آر رحمان کسی دوسرے پر اپنے مذہبی عقائد مسلط کرنے کے حامی نہیں ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ انکے گھر کی کچھ خواتین پردے کی سخت پابند ہیں تو کچھ روائیتی دوپٹہ اوڑھتی ہیں۔

خدیجہ رحمان اپنی بہن اور بھائی کیساتھ

ہندوستان ٹائمز برنچ کو دئیے گئے ایک انٹریو میں اے آر رحمان کا کہنا تھا کہ آپ کسی پر کچھ بھی مسلط نہیں کرسکتے جیسے آپ اپنے بیٹے یا بیٹی کو تاریخ کی جگہ معاشیات لینے کا نہیں کہہ سکتے، یہ ایک ذاتی انتخاب ہے۔

اخبار لکھتا ہے کہ اے آر رحمان کی بیٹی خدیجہ کو مختلف پروگرامز میں برقع پہننے پر تنقید کا سامنا کرنا پڑا، لیکن خدیجہ نے ہمیشہ والد کی مدد کے بغیر اس کا ڈٹ کر نہ صرف مقابلہ کیا بلکہ والد کے ساتھ برقع پہن کر بہت سے سٹیج بھی شیئر کیے۔

بیٹی خدیجہ کے حوالے سے کیے گئے ایک سوال کے جواب میں اے آر رحمان کا کہنا تھا کہ کسی مرد کا برقع پہننا ضروری نہیں اور نہ ہی پہننا چاہیے ورنہ میں بھی ایک پہنتا۔

50% LikesVS
50% Dislikes