مشہور ترک ڈرامے’’ ارطغرل غازی‘‘ سے متاثر ہو کر امریکی خاتون کا قبول اسلام – Kashmir Link London

مشہور ترک ڈرامے’’ ارطغرل غازی‘‘ سے متاثر ہو کر امریکی خاتون کا قبول اسلام

لندن (عدیل خان) ترکی کے مشہور ڈرامے ارطغرل غازی کی شہرت تو دور دور تک پھیل چکی ہے، تاہم اس ڈرامے کو دیکھ کر ایک امریکی خاتون نے متاثر ہوکر اسلام قبول کرلیا ہے۔

میڈیا رپورٹ کے مطابق امریکی ریاست وسکنسن کی رہائشی ساٹھ سالہ خاتون نے ’ارطغرل غازی‘ دیکھنا شروع کیا تو وہ اس سے متاثر ہوئے بنا نہ رہ سکیں اور اسلام قبول کرلیا۔ انہوں نے اپنا نام تبدیل کرکے خدیجہ رکھ لیا ہے ڈرامے میں انہیں ترگت اور سلجان خاتون کے کردار کافی پسند آئے ہیں۔

امریکی خاتون نے بتایا کہ ڈرامے میں محی الدین ابن العربی کے پیغامات سن کر وہ کافی متاثر ہوئیں اور ان کا زندگی کے بارے میں سوچ کا رخ تبدیل ہو گیا۔

خدیجہ کا کہنا ہےکہ انہیں تاریخ سے بہت زیادہ لگاؤ ہے جس کی وجہ سے ان کی توجہ اس ترک ڈرامے کی طرف گئی اور مجھے اسلام کے بارے میں جاننے اور اس کا مطالعہ کرنےکا موقع ملا۔

انہوں نے کہا کہ میں نے قرآن انگریزی میں کئی بار پڑھا اور اب میں پہلی فرصت میں ترکی جانا اور وہاں رہنا چاہتی ہوں۔

دریں اثناپاکستان میں مقیم جرمن ولاگر کرسٹیان بیٹزمین بھی دائرہ اسلام میں داخل ہوگئے۔

کرسٹیان بیٹز مین نے اسلام قبول کرنے کی خوشخبری اپنے یوٹیوب چینل اور دیگر سوشل میڈیا اکاؤنٹس پر دی۔ کرسٹیان نے یوٹیوب پر دائرہ اسلام میں داخل ہونے اور کلمہ شہادت اداکرنے کی مکمل ویڈیو شیئر کی۔ اور اس ویڈیو کے ساتھ اپنے دائرہ اسلام میں داخل ہونے کی وجہ اور کس چیز نے انہیں اتنا زیادہ متاثر کیا کہ انہوں نے سیدھے اور سچے راستے پر چلنے کا فیصلہ کیا یہ سب بتایا۔

انکا کہنا ہے میں یورپ میں پلا بڑھا ہوں جہاں لفظ ’’اسلام‘‘ کو ہمیشہ غلط معنوں میں لیتے ہیں اور اسے منفیت، جنگ، دہشت گردی سے جوڑتے ہیں۔ ایمانداری سے بتاؤں تو میں کبھی بھی بہت مذہبی شخص نہیں تھا لہذا مجھے اس سے کوئی غرض نہیں تھی کہ لوگ کیا سوچتے ہیں۔ میرے بچپن کے سب سے بہترین دوست مسلمان تھے اور ہم ہمسائے تھےہم سب اندر سے انسان ہی ہیں۔ اسلام امن کا مذہب ہے اور مجھے اس سے ایک گہرا تعلق محسوس ہوتا تھالہذا میں اپنے اندر کی گہرائیوں کو جاننا چاہتا تھا۔

50% LikesVS
50% Dislikes